شريعت كے عمومى مقاصد (1)‏

  • 24 جولائی 2018
شريعت كے عمومى مقاصد (1)‏

             منفعت عامہ كو منفعت خاصہ پر ترجيح دينا شريعتِ ا سلامى كا ايك  بنيادى اصول ہے،  ذہن ميں رہے كہ شريعتِ اسلامى كى بنيادى غرض وغايت اور حقيقى مقصد دنياوى واخروى منافع  دونوں كا حصول ہے-

            قرآن كريم اور سنتِ نبوىؐ ميں تشريعى احكام كى تحقيق سے واضح ہوتا ہے كہ ان سب كا مقصد يہى ہے، كيونكہ شريعت ميں كوئى مامور وماذون، جائز اور مباح فعل ايسا نہيں جو مفيد ونفع بخش نہ ہو اور كوئى ممنوع فعل ايسا نہيں جو نقصان ده نہ ہو-

           مگر حصولِ منفعت كے لحاظ سے مامور اور ممنوع افعال درجہ ميں برابر نہيں ہيں ، بلكہ كچھ اہم بنيادى منافع ومصالح ايسے ہيں جن كے حصول كے بغير  لوگوں كى زندگى خراب ہوجاتى ہے اور كچھ منافع ضرورى ہيں مگر پہلے درجہ سے كم ہيں، اور ان ميں سے كچھ منافع ايسے ہيں جو زندگى (كے اضافى لوازمات) كى تحسين وتزئين اور آرائش كے لئے ہوتے ہيں- فقہاء نے واضح طور پر بيان كيا ہے كہ لوگوں كى يہ منفعتيں اور ضرورتيں، تين امور پر مشتمل ہيں اور وه يہ ہيں: اہم ترين بنيادى امور، ضرورى اشياء، اور آرائشى وزيباشى چيزيں،  شريعت ا سلامى  كى حقيقى غرض وغايت  ان تينوں مقاصد كى حفاظت ہے، كبهى ان كا حصول اور كبهى ان كى حفاظت اور دفاع ہے، اسى اعتبار سے علماء نے مقاصدِ شريعت كى تين قسميں بيان كى ہيں:

  • اہم بنيادى مقاصد
  • ضرورى مقاصد
  • تنزئينى (تكميلى) مقاصد
  1. اہم بنيادي مقاصد

            اس سے مراد وه مقاصد ہيں جن پر لوگوں كى دينى اور دنياوى زندگى كا دارومدار ہے، كہ اگر يہ سب يا  ان ميں سے كوئى مفقود ومعدوم يا خراب ہو، تو لوگوں كا رہن سہن اور زندگى تباه برباد ہوجاتى ہے، اور دنيا ميں  ان كا رہنا  نا ممكن ہوجاتا ہے زندگى قائم نہيں ره سكتى، اور اسى طرح اخروى نعمتوں سے محرومى اور عذابِ آخرت مقدر بن جاتا ہے، اور يہ بنيادى اور اہم ترين مقاصد  پانچ ہيں: دين، جان، عقل، نسل اور مال كى حفاظت، بنى نوع انسان كى زندگى كى تعمير وبقاء اور دنيا  وآخرت ميں اس كى سعادت ميں ان كى اہميت كے پيش نظر تمام سابقہ اديان سماوى نے بهى ان بنيادى مقاصد كى حفاظت كا خيال ركها ہے-

            شريعت اسلامى نے بهى ان بنيادى اہم مقاصد كو مدد نظر ركها ہے،  اور اس كے لئے كئى احكام وضع كئے ہيں، ان ميں سے بعض ان كے حصول ووجود اور قوت كى ضمانت  ہيں، اور بعض دوسرے احكام ان مقاصد كو نقصان اور خطرات سے بچا كر ان كى بقاء كى ضمانت فراہم كرتے ہيں، چناچہ ان بنيادى مقاصد كى حفاظت ميں شريعت ا سلامى كى دوہرى ذمہ دارى ہے، وه ان كے قيام وثبات اور اركان كى تكميل كے لئے قانون سازى كے ساتھ ساتھ انہي خطرات سے بچانے كے لئے بعض دوسرے احكام بهى وضع كرتى ہے

دين كى حفاظت:

  1. اس كو قائم ركهنے كے لئے الله تعالى، اس كے فرشتوں، كتابوں، تمام رسولوں، اور يوم آخرت پر ايمان، دونوں شہادتيں، عبادت اور ان كے احكام پر عمل كرنا  واجب اور ضرورى ہے-
  2. اس كى حفاظت كے لئے جہاد كرنا، مرتد اور بدعتى كو سزا دينا، نيكى كا حكم دينا اور برائى سے منع كرنا اور لوگوں كے عقيدے اور ايمان كو خراب كرنے والوں كا مقابلہ كرنا  واجب ہے-

جان  كى حفاظت:

(أ) اس كو قائم ركهنے كے لئے كهانے، پينے، پہننے اور رہنے كے لئے احكام مقرر كئے گئے-

(ب) اس كى حفاظت كےلئے قصاص اور ہلاكت ميں ڈالنے كى ممانعت، حدود  اور احكام، ميراث اور وصيت سے محرومى كے احكام وضع كئے گئے ہيں-

عقل كى حفاظت:

(أ) اس كو قائم ركهنے كے لئے (بيان كرده) جان كى حفاظت كے لئے تمام احكام كے ساتھ ساتھ طلب علم اور غور وفكر كا حكم دياگيا ہے -

(ب) اس كى حفاظت كے لئے شراب كى حرمت نازل ہوئى، اور پينے والے كى سزا مقرر كى گئى، نشہ آور اور منشيات كو حرام كرنے ساتھ ساتھ فاسد عقائد اور خرافات سے بهى منع كيا گيا ہے-

نسل كى حفاظت:

(أ) شريعت نے اس كو قائم ركهنے كے لئے شادى كو جائز قرارديا

(ب) اس كى حفاظت كے لئے حد زنا، حد قذف مقرر كى گئى اور عورت كے حمل ضائع كرنے كو حرام قرارديا گيا-

مال كى حفاظت:

(أ) حصولِ مال اور اسے كمانے كے لئے ، عمل وسعى، خريد وفروخت اور كرائے كے احكام واجب كئے گئے-

(ب) اس كى حفاظت كے لئے چورى، ڈاكہ زنى، غصب، سود اور ذخيره اندوزى كو حرام كيا گيا، اسى طرح چورى اور ڈاكہ كى حد، غاصب اور حملہ آور كى تعزيز، كم عقل انسان كو اپنے مال سے خرچ كرنے كى ممانعت كے احكام وضع  كئے گئے-

              الله تعالى نے نبى اور پيغمبر زندگى كو قائم كرنے كے لئے ، اور انسان كى حفاظت كے لئے بهيجے ، دين كا مقصدہىانسانى زندگى ميں استقامت اور توازن پيدا كرنا ہے ، اسلام نےدين اور دنيا دونوں كے دامن كو پكڑنے كا حكم ديا ہے اور ايك ايسا راستہ بنايا ہے جس پر چلنے والا كبهى بهى نقصان ميں نہيں پڑے گا.شريعت كے عمومى مقاصد كو تفصيل سے جاننے كے لئے اس كا دوسرا حصہ بهى ملاحظہ فرمائيں

 

Print

Please login or register to post comments.

 

انسان كون ہے‎!‎؟

                 انسان ہى اس پورى كائنات كا مركز اور محور ہے پس اس كائنات كى ہر چيز اس كے تابع ہے اور تمام اديان اسى كے لئے نازل ہوئے اور سارى آسمانى وحى كا مخاطب بهى وہى ہے،  قرآن كريم  كى...

اور لوگوں كو اچهى باتيں كہنا...‏

کلمہ... لفظ يا بات كى زمدارى ایک امانت ہے، اس کے کہنے والوں کو چاہئے کہ اس بارے میں اللہ تعالى سے اتنا ڈرے، جتنى اسکي اہمیت و عظمت ہے اور جتنى اسکي وجہ سے بڑا خیر وجود میں آتا ہے یا بھیانک تباہي،بلا شبہ کلمہ (بات) کى امانت اور اسکى ذمہ داریاں...

قتلِ مسلم ‏

               رسول اللهؐ نے فرمايا كہ:«جب كبهى كوئى كسى دوسرے كى طرف ہتهيار سے اشاره كرتا ہے تو فرشتے اس پر لعنت بهيجتے ہيں۔» يعنى اگر صرف اشاره كرنے سے يہ وعيد ہے كہ فرشتے لعنت كرتے ہيں تو جو...

فضيلتِ مآب امامِ اكبر شيخ الازہر پروفيسر ڈاكٹر احمد الطيب كا "اوراسیا" یونیورسٹی ميں خطاب

بسم اللہ الرحمن الرحیم الحمد للہ والصلاۃ و السلام علی سیدنا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم وبارک علیہ و علی آلہ و صحبہ ۔۔۔وبعد۔ عزت مآب پروفیسر ڈاکٹر یارلان باتا شیفیتش سیدیکون۔ صدر جومیلویف اوراسیہ نیشنل یونیورسٹی تعلیمی سٹاف کے معزز...

12345678910Last

ازہرشريف: چھيڑخوانى شرعًا حرام ہے، يہ ايك قابلِ مذمت عمل ہے، اور اس كا وجہ جواز پيش كرنا درست نہيں
اتوار, 9 ستمبر, 2018
گزشتہ کئی دنوں سے چھيڑ خوانى كے واقعات سے متعلق سوشل ميڈيا اور ديگر ذرائع ابلاغ ميں بہت سى باتيں كہى جارہى ہيں مثلًا يه كہ بسا اوقات چھيڑخوانى كرنے والا اُس شخص كو مار بيٹھتا ہے جواسے روكنے، منع كرنے يا اس عورت كى حفاظت كرنے كى كوشش كرتا ہے جو...
فضیلت مآب امام اکبر کا انڈونیشیا کا دورہ
بدھ, 2 مئی, 2018
ازہر شريف كا اعلى درجہ كا ايک وفد فضيلت مآب امامِ اكبر شيخ ازہر كى سربراہى  ميں انڈونيشيا كے دار الحكومت جاكرتا كى ‏طرف متوجہ ہوا. مصر کے وفد میں انڈونیشیا میں مصر کے سفیر جناب عمرو معوض صاحب اور  جامعہ ازہر شريف كے سربراه...
شیخ الازہر کا پرتگال اور موریتانیہ کی طرف دورہ
بدھ, 14 مارچ, 2018
فضیلت مآب امامِ اکبر شیخ الازہر پروفیسر ڈاکٹر احمد الطیب ۱۴ مارچ کو پرتگال اور موریتانیہ کی طرف روانہ ہوئے، جہاں وہ دیگر سرگرمیوں میں شرکت کریں گے، اس کے ساتھ ساتھ ملک کے صدر، وزیراعظم، وزیر خارجہ اور صدرِ پارلیمنٹ سے ملاقات کریں گے۔ ملک کے...
12345678910Last

رمضان کا رب تمام مہینوں کا رب ہے
رمضان کی فضیلت ماہِ رمضان برکت کا مہینہ ہے ۔ اس ماہ کی عظمت کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ قرآن مقدس کا نزول اسی پاک مہینے میں ہوا،...
پير, 2 جولائی, 2018
عبادت كى حقيقت ‏
جمعرات, 1 مارچ, 2018
تفريح كى قدر وقيمت
پير, 12 فروری, 2018
اخلاق كے معانى
اتوار, 28 جنوری, 2018
123456789

انسان كون ہے‎!‎؟
                 انسان ہى اس پورى كائنات كا مركز اور محور ہے پس اس كائنات كى ہر چيز اس كے تابع ہے اور...
بدھ, 17 اکتوبر, 2018
قتلِ مسلم ‏
اتوار, 14 اکتوبر, 2018
باطنى جہاد يا ظاہرى جہاد!!‏
اتوار, 30 ستمبر, 2018
علم كى قيمت
جمعرات, 27 ستمبر, 2018
12345678