عبادت كى حقيقت ‏

  • 1 مارچ 2018
عبادت كى حقيقت ‏

         فرمان ِ الہى ہے كہ "وما خلقت الجن والانس الا ليعبدون"  (ميں  نے جنات اور انسانوں كو محض اسى لئے پيدا كيا كہ وه صرف ميرى عبادت كريں) ،  عبادت كى كسى بھى قسم ميں اولين مقام  الله كى وحدانيت كا ہے ، كيونكہ يہى عبادت كى بنياد كہلاتى ہے، البتہ  عبادت كى حقيقت  تك پہنچنے  كيلئے عبادت كا مظہر يا  اس كى ظاہرى شكل كا  موجود ہونا كافى نہيں ہے، عبادت  ميں بلا شك كچھ ظاہرى افعال  كا ہونا ضرورى ہے  ليكن انہى افعال كو باطن يعنى انسان كے اندرون سے متفق ہونا چاہئيے،  كيونكہ اس كے بغير عبادت روح سے خالى جسم كى مانند ہوجاتى ہے، يہ بات صحيح ہے كہ اگر انسان عبادت كى شكل كو ادا كردے تو اس كے ذمہ سے  كم از كم اس كى ادائيگى كا واجب اٹھ جاتا ہے، ليكن ايسى عبادت سے عبادت كا مطلوبہ نتيجہ حاصل نہيں ہو تا،  جو صرف اس عبادت سے حاصل ہوسكتا ہے جس كا كرنے والا اسے اپنے دل كى  گہرائيوں اور خالص نيت سے ادا كرے، قرآن كريم نے ان كى صفت بيان كرتے ہوئے ان كى تعريف كى ہے، (جو اپنى نماز ميں خشوع كرتے ہيں) (سورۂ مومنون:  2) اور ايسے ہى معنى كى طرف قرآن نے قربانى كے سلسلہ ميں اشاره كيا ہے، (اللہ تعالى كو قربانيوں كے گوشت نہيں پہنچتے نہ اس كے خون بلكہ اسے تو ہمارے دل كى پر ہيز گارى پہنچتى ہے) (سورۂ حج: 37) پس اسلام ميں عبادت كے اندرنيت اور  اخلاص كو بہت اہميت حاصل ہے، اور انكا نہ ہونا گويا كہ بلا فائده اپنے آپ كو تهكانا ہے،  كيونكہ  بغير خشوع اور خضوع كے نماز ايگ كهو كهلى حركت ہے، جس سے تربيت اور تہذيب پر كوئى اثر نہيں ہوگا، اور اسى طرح ذكر الہى جب صرف زبان كى حركت كى حد تك ہو تو ايسے ذكر كا كوئى فائده نہيں ہوتا. عبادت دراصل روح كى غذا ہے اور روح كى غذا باطن سے تشكيل پاتى ہے ، نہ كہ ظاہرى افعال سے. جو  انسان نماز  اور روزه اسى لئے ركھتا ہے كہ   لوگ اس كى تعريف كريں، اسے ديندار آدمى سمجھ كر اس پر بھروسہ كريں  تو اس كى حالت  اس  گھر  كى طرح ہے جو باہر سے تو نہايت عاليشان ہو ليكن اندر سے بالكل خالى، جس ميں نہ  رہنے كا سامان ہو اور نہ ہى كسى قسم كى كوئى زندگى،  وه اس بنجر زمين كى مانند ہو جاتا ہے جس ميں ہزار ہا كوششوں كے باوجود بهى پهول پودے نہيں كهل سكتے . الله كى عبادت كرنا دراصل الله كو پہچاننے كا وسيلہ ہے اور الله كى حقيقى پہچان اس وقت ہى ہو سكتى ہے جب انسان كو اپنى زندگى كے مقصد  سے اچهى طرح واقفيت ہو.  اور زندگى كا مقصد اسى وقت پورا ہوگا جب ہم صرف اپنے لئے نہيں بلكہ دوسروں كے لئے رہنا سيكهيں ، جب ہميں يہ معلوم ہوجائے كہ روزه ركهنے كا مطلب بهوكا رہنا نہيں بلكہ يہ سيكهنا ہے كہ ہم دوسروں كى بهوك كيسے دور كر سكتے ہي، جب ہم يہ جان ليں كہ حج كعبہ كے گرد طواف كرنے كا نام نہيں ہے ، بلكہ يہ ثابت كرنا ہے كہ دربارِ الہى ميں امير غريب، كالے گورے، عربى يا عجمى كے درميان كوئى فرق نہيں ہے، عبادت كا مقصد روح كى تہذيب ہے اور روح كى تہذيب پر وہى قادر ہيں جن كے اخلاق اور اندرون مہذب ہوں.

Print
Tags:

Please login or register to post comments.

 

شريعت كے عمومى مقاصد (2)‏

 يہ بات  ہم پہلے بيان كر چكے ہيں كہ تمام شرعى احكام كا مركز اور محور، يا تو ان اہم بنيادى مقاصد كى حفاظت ہے( شريعت كے عمومى مقاصد 1 پڑهيں ) جو انسان كى تعمير وترقى اور تمدن  ميں سنگِ ميل كى حيثيت ركهتے ہيں اور  جن كے بغير دنيا...

ازہرشريف: چھيڑخوانى شرعًا حرام ہے، يہ ايك قابلِ مذمت عمل ہے، اور اس كا وجہ جواز پيش كرنا درست نہيں

گزشتہ کئی دنوں سے چھيڑ خوانى كے واقعات سے متعلق سوشل ميڈيا اور ديگر ذرائع ابلاغ ميں بہت سى باتيں كہى جارہى ہيں مثلًا يه كہ بسا اوقات چھيڑخوانى كرنے والا اُس شخص كو مار بيٹھتا ہے جواسے روكنے، منع كرنے يا اس عورت كى حفاظت كرنے كى كوشش كرتا ہے جو...

اسلامى اخلاق كى خصوصيات

            اسلام ميں اخلاق كو چند خصوصيات اور امتيازات حاصل ہيں جو باقى تمام فلسفى مذاہب كى ديگر تمام اخلاقى نظاموں سے مختلف ہيں،  اسلامى اخلاقى نظام كى اہم ترين خصوصيات مندرجہ ذيل ہيں: - اخلاقى مسائل كى...

شريعت كے عمومى مقاصد (1)‏

             منفعت عامہ كو منفعت خاصہ پر ترجيح دينا شريعتِ ا سلامى كا ايك  بنيادى اصول ہے،  ذہن ميں رہے كہ شريعتِ اسلامى كى بنيادى غرض وغايت اور حقيقى مقصد دنياوى واخروى منافع  دونوں كا حصول...

12345678910Last

ازہرشريف: چھيڑخوانى شرعًا حرام ہے، يہ ايك قابلِ مذمت عمل ہے، اور اس كا وجہ جواز پيش كرنا درست نہيں
اتوار, 9 ستمبر, 2018
گزشتہ کئی دنوں سے چھيڑ خوانى كے واقعات سے متعلق سوشل ميڈيا اور ديگر ذرائع ابلاغ ميں بہت سى باتيں كہى جارہى ہيں مثلًا يه كہ بسا اوقات چھيڑخوانى كرنے والا اُس شخص كو مار بيٹھتا ہے جواسے روكنے، منع كرنے يا اس عورت كى حفاظت كرنے كى كوشش كرتا ہے جو...
فضیلت مآب امام اکبر کا انڈونیشیا کا دورہ
بدھ, 2 مئی, 2018
ازہر شريف كا اعلى درجہ كا ايک وفد فضيلت مآب امامِ اكبر شيخ ازہر كى سربراہى  ميں انڈونيشيا كے دار الحكومت جاكرتا كى ‏طرف متوجہ ہوا. مصر کے وفد میں انڈونیشیا میں مصر کے سفیر جناب عمرو معوض صاحب اور  جامعہ ازہر شريف كے سربراه...
شیخ الازہر کا پرتگال اور موریتانیہ کی طرف دورہ
بدھ, 14 مارچ, 2018
فضیلت مآب امامِ اکبر شیخ الازہر پروفیسر ڈاکٹر احمد الطیب ۱۴ مارچ کو پرتگال اور موریتانیہ کی طرف روانہ ہوئے، جہاں وہ دیگر سرگرمیوں میں شرکت کریں گے، اس کے ساتھ ساتھ ملک کے صدر، وزیراعظم، وزیر خارجہ اور صدرِ پارلیمنٹ سے ملاقات کریں گے۔ ملک کے...
12345678910Last

رمضان کا رب تمام مہینوں کا رب ہے
رمضان کی فضیلت ماہِ رمضان برکت کا مہینہ ہے ۔ اس ماہ کی عظمت کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ قرآن مقدس کا نزول اسی پاک مہینے میں ہوا،...
پير, 2 جولائی, 2018
عبادت كى حقيقت ‏
جمعرات, 1 مارچ, 2018
تفريح كى قدر وقيمت
پير, 12 فروری, 2018
اخلاق كے معانى
اتوار, 28 جنوری, 2018
123456789

شريعت كے عمومى مقاصد (2)‏
 يہ بات  ہم پہلے بيان كر چكے ہيں كہ تمام شرعى احكام كا مركز اور محور، يا تو ان اہم بنيادى مقاصد كى حفاظت ہے( شريعت كے عمومى مقاصد 1...
اتوار, 16 ستمبر, 2018
شريعت كے عمومى مقاصد (1)‏
منگل, 24 جولائی, 2018
مذہبى تنوع كا احترام
پير, 9 جولائی, 2018
123456