اسلام اور امن وامان

  • 13 ستمبر 2017
اسلام اور امن وامان

          اسلام محض ايك مذہب يا عبادت كا نظام نہيں بلكہ آشتى كا، فتنہ وفساد سے نجات اور لڑائى جهگڑے سے اجتناب كا نام، اور روادارى، برداشت اور بردبارى، عدل ومساوات، حسنِ خيالات، احترامِ جذبات اور تحفظِ ذات كا نام ہے۔

         آج پورى دنيا ميں جنگ كا عالم ہے- مشرق وسطى ميں خون كى ندياں بہہ رہى ہيں- پاكستان، افغانستان اور ہندوستان بهى بدامنى كے اس ريلے سے محفوظ نہيں، چونكہ قرآن پاك ميں الله تعالى كا ارشاد ہے كہ: (دین تو خدا کے نزدیک اسلام ہے) (سورۂ آل عمران: 19) تو الله كے نزديك نظامِ حيات صرف سلامتى پر مبنى ہو سكتا ہے اور وه اسلام ہى ہے- اس بات میں ذرہ برابر بھی شک نہیں ہے کہ اسلام خود بھی امن وسلامتی والا دین ہے اور دوسروں کو بھی امن وعافیت کے ساتھ رہنے کہ تلقین کرتا ہے، اسکی سب سے بڑی دلیل یہ ہے کہ اللہ رب العزت نے اپنے بھیجے ہوئے دین کا نام ہی اسلام پسند کیا ہے اسلام کے معنی ہی سلامتی اور امن وامان کے آتے ہیں۔

        اسلام اور دہشت گردی کے تعلق کی بات کرنا حقیقت کے خلاف ہے۔  اسلام امن ، محبت، عدل و انصاف اور میانہ روی کا دین ہے اور اس کا دہشت گردی اور خون ریزی سے کوئی تعلق نہیں جو لوگ اسلام کے نام پر دہشت گردی کرتے ہیں، اسلام ميں غیر اسلامی ملک کے غیر مسلم افراد پر انفاق کرنا اور مصیبت و آفت میں ان کے ساتھ ہمدردی و تعاون کرنا تو مسلمانوں کا وصف خاص ہے- اسلام نے غیر مسلم افراد سے کاروبار، تجارت، لین دین اور معاملات کو درست رکھا ہے اسلام ميں  مسلمان غیر مسلموں کے ساتھ کتنے پاکیزہ طریقہ پر معاملات کرتے آئے ہیں کہ ظلم و زیادتی اور حق تلفی کا کوئی شائبہ تک نہیں ، اسی طرح مسلمان غیر مسلموں سے رہن کا معاملہ بھی کرسکتے ہیں۔رسول اللهؐ نے فرمایا : «مومن وہ ہے جس سے تمام لوگوں کے خون اور مال محفوظ ہوں۔»  اس ارشاد نبوى مبارک سے روز روشن کی طرح ظاہر ہے کہ اسلام نے غیر مسلموں کے بھی جان و مال کو تحفظ دیا ہے اور انہیں باوقار زندگی مرحمت کی ہے اور کامل مومن کی علامت و شناخت بھی یہی رکھی کہ اس سے دوسرے لوگ خواہ مسلم ہوں کہ غیر مسلم، مامون ومحفوظ رہیں۔يہاں تك كہ  رسول الله نے مسلمان فرد كى نشانى بھى  يہى ركھى ہے، آپ ؐ كا ارشاد ہے كہ " مسلمان وه ہے جس كے زبان اور ہاتھ سے دوسرے لوگ محفوظ رہيں"۔

         خلاصہ يہ ہے كہ اسلام  دينِ امن وامان ہے، لوگوں كے درميان مہربانى اور شفقت  كى دعوت ديتا ہے  رسول ِ اكرم نے نجران كے عيسائيوں كے ساتھ جو معاہده كيا اس ميں واضح طور پر اس بات كا اعلان كيا  كہ ان كے جان ومال، عزت و آبرو، ان كى عبادت گاہيں، ان كى مورتياں الله كى امان اور ميرے يعنى محمد كى ضمانت ميں ہے ، ان تمام اشيا كو مد نظر ركھتے ہوئے  يہ بات واضح ہو جاتى ہے كہ سلام يعنى امن ہى ہمارے دينِ حنيف كى بنياد ہے اور اس كو پھيلانے كے لئے ہميں اس بات كو قبول كرنا ہوگا كہ ہم اس دنيا ميں اكيلے نہيں ہيں  اور جس طرح كہ فرمانِ الہى ہے كہ "لَكُمْ دِينُكُمْ وَلِيَ دِينِ" ( تمہارے لئے تمہارا دين ہے اور ميرے لئے ميرا دين)  اللہ تعالى يہ بھى فرماتا ہے كہ "لَا إِكْرَاهَ فِي الدِّينِ" (دين ميں كسى قسم كى زبردستى نہيں) يعنى كہ ہم كسى كو اسلام لانے پر مجبور نہيں كر سكتے كيونكہ اس طريقہ سے اگر كوئى اسلام لايا  بھى تو وه سچا اور پكا اسلام ہرگز نہيں  ہوگا . اسلام تلوار يا قوت كى حد سے نہيں بلكہ  اخلاقِ حسنہ سے پھيلا اور اس كو مزيد  پھيلانے كے لئے ہميں دہشت گردى اور خوف كى نہيں بلكہ امن وسلامتى كى ضرورت ہے  ہميں بين المذاہب بلكہ بين المسالك مكالمہ كى ضرورت ہے  كيونكہ اگر مختلف مذاہب اور مسالك كے لوگوں كے درميان رابطہ ہوگا تو وہ غلط فہمياں جس كو بعض متشددين  پھيلاتے ہيں اور جو فسادات اور قتل وغارت كا سبب بنتى ہيں  بے بنياد  ہو جائيں گيں ۔

Image

Print

Please login or register to post comments.

 

‎”امام، پوپ اور مشکل راستہ" انسانی اخوت کی دستاویز کے مختلف مراحل پر لکھی جانے والی ایک تاریخی کتاب ہے، جو اس سال قاہرہ انٹرنیشنل بک فئیر میں الازہر اور مسلم علما کونسل کے کارنر میں دستیاب ہے
اتوار, 4 جولائی, 2021
  ‎۔ اس کتاب کے مصنف جسٹس محمد عبد السلام ہیں، جو انسانی اخوت  کی اعلی کمیٹی کے سیکریٹری جنرل اور پروفیسر ڈاکٹر احمد الطیب شیخ الازہر کے سابق مشیرکار  بھی ہیں۔ ‎شیخ الازہر پروفیسر ڈاکٹر احمد الطیب اور رومن کیتھولک...
ازہر شريف: رفیوجیز دوگنے مشکلات اور بحرانوں کا سامنا کررہے ہیں۔ عالمی برادری پر ان کی حمایت اور حفاظت فرض ہے۔
پير, 21 جون, 2021
  ازہر شريف ساری دنیا کو جدید دور کے تارکینِ وطن کے مسائل کی یاد دلاتی ہے ... جن میں سے قدیم ترین مسئلہ "فلسطینی مہاجرین كا مسئلہ" ہے۔ 20 جون پناہ گزینوں کا عالمى_دن ہے؛ اس موقع پر ازہر شریف تمام دنیا کے ممالک سے مطالبہ كرتا...
"ہم انتہا پسندی کے خلاف جنگ میں الازہر الشريف كے ساتھ تعاون کرنے میں بے حد دلچسپی رکھتے ہیں": قاہرہ میں جاپانی سفیر نے الازہر آبزرویٹری کی کوششوں کو سراہاتے ہوئے كہا
پير, 14 جون, 2021
  گزشتہ اتوار كو الازہر آبزرویٹری برائے انسداد انتہا پسندی نے قاہرہ میں جاپانی سفیر جناب "مساکا نو" کا استقبال كيا، جنہوں نے انتہا پسندانہ نظریات سے نمٹنے میں الازہر آبزرويٹرى كے اہم اور نماياں کردار کے بارے میں جاننے کے لئے...
245678910Last

ازہرشريف: چھيڑخوانى شرعًا حرام ہے، يہ ايك قابلِ مذمت عمل ہے، اور اس كا وجہ جواز پيش كرنا درست نہيں
اتوار, 9 ستمبر, 2018
گزشتہ کئی دنوں سے چھيڑ خوانى كے واقعات سے متعلق سوشل ميڈيا اور ديگر ذرائع ابلاغ ميں بہت سى باتيں كہى جارہى ہيں مثلًا يه كہ بسا اوقات چھيڑخوانى كرنے والا اُس شخص كو مار بيٹھتا ہے جواسے روكنے، منع كرنے يا اس عورت كى حفاظت كرنے كى كوشش كرتا ہے جو...
فضیلت مآب امام اکبر کا انڈونیشیا کا دورہ
بدھ, 2 مئی, 2018
ازہر شريف كا اعلى درجہ كا ايک وفد فضيلت مآب امامِ اكبر شيخ ازہر كى سربراہى  ميں انڈونيشيا كے دار الحكومت جاكرتا كى ‏طرف متوجہ ہوا. مصر کے وفد میں انڈونیشیا میں مصر کے سفیر جناب عمرو معوض صاحب اور  جامعہ ازہر شريف كے سربراه...
شیخ الازہر کا پرتگال اور موریتانیہ کی طرف دورہ
بدھ, 14 مارچ, 2018
فضیلت مآب امامِ اکبر شیخ الازہر پروفیسر ڈاکٹر احمد الطیب ۱۴ مارچ کو پرتگال اور موریتانیہ کی طرف روانہ ہوئے، جہاں وہ دیگر سرگرمیوں میں شرکت کریں گے، اس کے ساتھ ساتھ ملک کے صدر، وزیراعظم، وزیر خارجہ اور صدرِ پارلیمنٹ سے ملاقات کریں گے۔ ملک کے...
12345678910Last

دہشت گردى كا خاتمہ اور ايك " باعزت زندگى" (حياة كريمة) كا آغاز
        دہشت گردی كی کوئی ایسی تعریف کرنا جو کہ ہر لحاظ سے مکمل اور ہر موقع پر سو فیصد اتفاق رائے سے لاگو کی جا سکے، اگر...
اتوار, 12 ستمبر, 2021
عورت ؛اسلام كى روشنى ميں
منگل, 27 جولائی, 2021
12345678910Last

دہشت گردى كے خاتمے ميں ذرائع ابلاغ كا كردار‏
                   دہشت گردى اس زيادتى  كا  نام  ہے جو  افراد يا ...
جمعه, 22 فروری, 2019
اسلام ميں مساوات
جمعرات, 21 فروری, 2019
دہشت گردى ايك الميہ
پير, 11 فروری, 2019
1234567810Last