اسلام اور روادارى

  • 10 دسمبر 2018
اسلام اور روادارى

               الله رب العزت کے نزديک دنیا کے سارے انسان ایک کنبہ یا خاندان کی مانند ہے اور اللہ کے نزدیک سب سے بہتر وہی ہے جو اس کنبہ یعنی دوسرے انسانوں کے ساتھ بہتر ہو۔

              رواداری ، عدم تحمل کی ضد ہے یعنی کہ یہ صبر وتحمل اور برداشت کرنے کا دوسرا نام ہے۔ اسلام میں مذہبی رواداری کی تعلیمات ایک روشن باب ہے۔ قرآن مجید اور احادیث نبویہ کے مطالعہ سے یہ بات کھل کر سامنے آئے گی کہ انسانیت اور مذہبی رواداری کی بے شمار روایات ہیں جن سے بخوبی اندازہ ہوگا کہ مذہب اسلام ایک ایسا عالمگیر مذہب ہے جس میں انسانیت کے ساتھ حسن سلوک ، انسانوں کی خدمت اور ان کی بہتری ہی سر فہرست ہے۔

             قرآن مجید میں رواداری، فراخدلی اور انسان دوستی کی جو تعلیمات دی گئیں ان پر رسول خدا حضرت محمدؐنے عمل کر کے دکھایا،ارشاد بارى ہے: ((اے محمدؐ) خدا کی مہربانی سے تمہاری افتاد مزاج ان لوگوں کے لئے نرم واقع ہوئی ہے۔ اور اگر تم بدخو اور سخت دل ہوتے تو یہ تمہارے پاس سے بھاگ کھڑے ہوتے۔) [آل عمران: 159]۔

               ’’آپؐ ؐ کا ارشاد گرامی بھی اسی مضمون کی تائید کرتا ہے ، ساری مخلوق خدا کا کنبہ ہے، اس کے نزدیک سب سے پسندیدہ انسان وہ ہے جو اس کے کنبہ کے ساتھ نیکی کرے،اچھا برتاؤ کرے ،حضورؐ کی تعلیم یہ بھی رہی کہ ایک دوسرے سے تعلقات ختم نہ کئے جائیں، ایک دوسرے سے منہ نہ پھیرا جائے، ایک دوسرے سے کینہ نہ رکھا جائے، ایک دوسرے سے حسد نہ کیا جائے، بس سب کو آپس میں خدا کے بندے بن کر رہنا چاہئے۔

               آپؐ نے بڑی وضاحت کے ساتھ یہ بھی ارشاد فرمایا کہ جو شخص لوگوں پر رحم نہیں کرتا ، اس پر خدا بھی رحم نہیں کرتا، اسلام کے دشمنوں کے مظالم سے تنگ آکر ایک مرتبہ صحابہ -  رضى الله عنہ -نے آپؐ سے ان کے لئے بددعا کی درخواست کی تو آپؐ نے فرمایا : ’’میں لعنت اور بددعا کرنے کے لئے نہیں بھیجا گیا ہوں بلکہ رحمت بنا کر بھیجا گیا  ہوں"۔

               رسول اللہؐ نے نبوت کے فرض منصبی کو بحسن و خوبی انجام دیتے ہوئے ایسی رواداری اور فراخدالی دکھائی جو انسانی تاریخ کی بہت روشن اور تابناک مثالیں ہیں۔ قریش، یہود اور نصاریٰ سب ہی نے آپؐ کو ہر طرح کی ایذائیں پہنچائیں، مگر آپؐ نے ان سب کو نہایت صبروتحمل اور بردباری سے برداشت کیا، یہودی ، عیسائی اور کفارومشرکین کی جانب سے ایذاء رسانیوں کی ایک لمبی فہرست ہے لیکن مشہور نعت کے یہ الفاظ ہمیں اچھی طرح ہیں۔

              اسلام بنيادى  طورپر روداری کا درس دیتا ہ