اسلام ميں خود كشى كى ممانعت

  • 6 فروری 2019
اسلام ميں خود كشى كى ممانعت

              انسان كى جان اللہ تعالى كى طرف سے ايك عظيم عطا كرده  نعمت ہے،اسلام ميں جان كے تحفظ  كا حق ايك  بنيادى  نوعيت ركھتا ہے،اور اسلام نے انسانى جان  كے تقدس پر  بہت زور ديا ہے،قرآن كريم ميں كئى مقامات  پر انسانى جان كى  اہميت اور تقدس  بيان كى  ہے: "من قتل نفسًا بغير نفس أو فساد في الأرض فكأنما قتل الناس جميعًا" (جو شخص کسی کو (ناحق) قتل کرے گا (یعنی) بغیر اس کے کہ جان کا بدلہ لیا جائے یا ملک میں خرابی کرنے کی سزا دی جائے اُس نے گویا تمام لوگوں کو قتل کیا) [سورۂ مائده: 32] ۔

               اسلام ميں ايك آدمى كا قتل پورى  انسانيت كے قتل كى ما نند ہے، اور ايك آدمى كى زندگى كے تحفظ پورى انسانيت كے تحفظ كى طرح ہے، حضور پاكؐ نے خطبہ وداع ميں  اس بات پر زور ديا ہے كہ انسانى جان ومال وعزت   اتنى ہى مقدس ہے جتنا كہ  حجۃ الوداع، اسلام كے نزديك كسى  بھى شخص  كو قتل كرنا  انتہائى برا جرم ہے، الا يہ  كہ  وہ قتل  كسى جان  كے بدلے ميں  ہى  كيا جائے كيونكہ قاتل كو  زندگى  كى امان  دينے كا مطلب  معاشرے ميں بد امنى ، بغاوت  اور اللہ كے قانون  سے سركشى  كے رجحانات كو  راه دينا  ہے، يہى وجہ ہے  كہ اسلام  نے قتل  كے جرم  كے خاتمہ  كے لئے  قصاص كاقانون ديا ہے، انسانى جان كى حرمت  كو بيان  كرتے ہوئے ارشاد فرمايا: "ولا تقتلوا النفس التي حرم الله إلا بالحق" (اور کسی جان (والے) کو جس کے قتل کو خدا نے حرام کر دیا ہے قتل نہ کرنا) [سورۂ انعام:151]۔

                 اسلام نہ صرف قتل كى ممانعت  كرتاہے، بلكہ  خود كشى  كوبھى  اتنا ہى  برا عمل تصور  كرتا ہے،جان كے تحفظ كے لئے اسلام نے افراد معاشرہ كو اس بات كا پابند كيا ہے كہ وہ  كسى بھى صورت ميں  خود كشى كے مرتكب  نہ ہوں، حضورؐ نے فرمايا: «جس نے كسى چيز كے ساتھ  خود كشى  كى  تو اس كو جہنم  كى   آگ ميں  اسى چيز كے ساتھ  عذاب ديا جائے گا»۔

                 اسلام ميں خود كشى ايك حرام فعل ہے اور اس كا مرتكب  اللہ تعالى كا نافرمان اور جہنمى ہے، اسلام نے اسے اتنا بڑا جرم اس لئے قرار ديا   كيونكہ  انسان كا اپنا جسم  اور زندگى  اس كى ذاتى ملكيت  نہيں، يہ ہى صرف نہيں  بلكہ وه ہى اللہ تعالى كى عطا كرده امانت ہے، اسلام کسی انسان کو خود اپنی جان تلف لیے کار آمد رہے، یہی وجہ ہے اسلام نے خودکشی کرنے کی ہرگزاجازت نہیں دی۔

                زندگی اور موت کا مالکِ حقیقی اﷲ تعالیٰ ہے،جس طرح کسی دوسرے شخص کو موت کے گھاٹ اتارنا پوری انسانیت کو قتل کرنے کے مترادف قرار دیا گیا ہے، اُسی طرح اپنی زندگی کو ختم کرنا یا اسے بلاوجہ تلف کرنا بھی اﷲ تعالیٰ کے ہاں ناپسندیدہ فعل ہے۔ ارشا ربانی ہے: "ولا تلقوا بأيديكم إلى التهلكة" (اور اپنے آپ کو ہلاکت میں نہ ڈالو) [سورۂ بقره: 195]۔

                احاديث مباركہ ميں خود كشى كى ممانعت  بھى  وارد ہوئى ہے، حضور نبى اكرم ص نے ارشاد فرمايا: «وإن لجسدك عليك حق» ( تمہارے جسم كا بھى تم پر  حق  ہے)۔

                اسلام  ہمارى تلقين كرتا ہے كہ ہم اپنے جسم  وجان  اور تمام اعضاء كى حفاظت  اور ان كے حقوق ادا كريں، يہ ہى  خود كش حملوں اور دوسروں پر امن شہريوں  كى قيمتيں جانيں  كى تلف كا   ہرگز  اجازت نہيں ديتا ہے،حضور نبى اكرمؐ نے خودكشى جيسے بھيانك اور حرام فعل كا مرتكب كو درد ناك سزا  كا مستحق قرار ديا ہے، انھوں نے فرمايا: «من تردى من جبل فقتل نفسه فهو في نار جهنم يتردى فيه خالدًا مخلدًا أبدًا» (جس شخص نے  خود كو  پہاڑ سے گرا كر  ہلا ك كيا  تو وہ  دوزخ ميں  جائے گا، ہمیشہ اس میں گرتا رہے گا اور ہمیشہ ہمیشہ وہیں رہے گا)۔  

                خود كشى بہت سنگيں  جرم ہے،  اس  فعل سے  انسانى زندگياں  بلا وجہ  خطرے سے   دو چار  ہو سكتى ہے،  بے شك دوسروں  كى قيمتى جانيں  تلف كرنا انتہائى نادانى، ناسمجھى، اور جہالت ہے۔

                خلاصہ كلام  يہ ہے كہ اسلام امن وسلامتى، خير وعافيت  اور حفظ وامان كا دين ہے،  سچا مسلم وہ ہے  جو   نہ صرف  تمام انسانيت كے لئے پيكر امن  وسلامتى اور باعث خير وعافيت   ہو بلكہ وه ہى  امن وسلامتى، تحمل  وبرداشت،  بقاء  باہمى اور احترام آدميت  جيسے  اوصاف سے بھى متصف ہو، اسلام خود  سراپائے امن وسلامتى ہے، اور  دوسروں كو   بھى امن وسلامتى  كى تعليم ديتا ہے،  جبكہ جو  مذہب كے نام پر  بے گناه اور معصوم لوگوں  پر خودكش  حملے، انتہاپسندى، نفرت  وتعصب، اور تشدد  كا راستہ اختيار كر كے  شہريوں كا خون  بہا تے ہيں،اور  دوسروں كو تكليف   ديتے  ہيں، ان كا  يہ عمل  مقبول نہيں ہوگا، اور  اسلام   اس عمل  كى ممانعت  كرتا ہے۔

 

Print

Please login or register to post comments.

 

موت کے کھیل!!
اتوار, 18 اپریل, 2021
    الازہر انٹر نیشنل سنٹر برائے الیکٹرانک فتوی  نے "ٹک ٹوک" ویڈیو ایپلی کیشن کے "نیلے رنگ کے اسکارف" یا "بلیک آؤٹ" چیلنج کے خطرے سے خبردار کیا ہے، جو اپنے صارفین کو دعوت دیتا ہے کہ  کمرے کو...
دہشت گرد اور انتہا پسند جماعتیں بچوں کو کیوں بھرتی کرتی ہیں؟
منگل, 16 مارچ, 2021
              بچوں کی بھرتی ایک سفاکانہ اور غیر انسانی عمل ہے ، جو دہشت گرد گروہوں میں وسیع پیمانے پر پھیلتا ہوا ایک واضح  رجحان بنتا نظر آرہا ہے، جس ميں حالیہ دنوں كے دوران قابل ذکر اضافہ دیکھنے میں...
لاک ڈاؤن کے دوران گھریلو تشدد !
بدھ, 13 جنوری, 2021
       قدرتی آفات اور خواتین پر تشدد کی اعلی شرحوں کے مابین قریبی وابستگی کسی ایک ملک سے منفرد نہیں ہے۔ لیکن یہ دنیا کے بہت سارے ممالک میں موجود ہے۔ اس موضوع پر تحقیقات کا مطالعہ کرنے كے بعد   ہمیں معلوم ہوتا ہے کہ...
1234567810Last

حکومتی سطح پر ایک عظیم الشان جلسہ عام انڈونیشیا کی طرف سے امام اکبر کو اعزازی ڈاکٹریٹ کی ڈگری سے سرفراز کیا گیا -
جمعرات, 25 فروری, 2016
ازہر شریف کا پیغام اہل السنت والجماعت کے مسلک  پر مضبوطی سے قائم رہنا ہے - حکومتی پیمانہ پر ایک خاص اہتمام اور استقبال انڈونیشیا کے مشرقی صوبے جاوہ کے شہر ما لانج میں واقع مولانا مالک ابراہیم نامی سرکاری اسلامی یونیورسٹی نے اپنے احاطہ میں...
ازہر شريف سے بيان
منگل, 29 دسمبر, 2015
ازہر شريف اپنى دستاويزوں ميں آزادى اور خاص طور پر عقيده كى آزادى كے متعلق آنے جانے والے بيانات پر ان قرآنى نصوص كى بنياد پر تاكيد كرتا ہے  لا إكراه في الدين دین (اسلام) میں زبردستی نہیں ہے (سورة البقرة: 256) اور ارشاد بارى تعالى ہے لكم دينكم...
سكاى نيوز كے ساتھ انٹرويو ميں امامِ اكبر شيخِ ازہر نے كہا ..
پير, 16 نومبر, 2015
سكاى نيوز كے ساتھ  انٹرويو ميں امامِ اكبر شيخِ ازہر نے كہا : پارس ميں جو ہوا ہے  ايك سنگين جرم ہے جس سے ہر مذہب انسان يا تہذيب برى ہے . ہم فرانس كے صدر،  فرانسيسى قوم اور خاص طور پر  متاثرين كے اہل كاروں كو تعزيت پيش كرتے...
First4567891113

موت کے کھیل!!
    الازہر انٹر نیشنل سنٹر برائے الیکٹرانک فتوی  نے "ٹک ٹوک" ویڈیو ایپلی کیشن کے "نیلے رنگ کے اسکارف" یا...
اتوار, 18 اپریل, 2021
ہم روزے کیوں رکھتے ہیں!؟
بدھ, 14 اپریل, 2021
اسلام میں مذہبی آزادی
منگل, 19 جنوری, 2021
12345678910Last

دہشت گردى كے خاتمے ميں ذرائع ابلاغ كا كردار‏
                   دہشت گردى اس زيادتى  كا  نام  ہے جو  افراد يا ...
جمعه, 22 فروری, 2019
اسلام ميں مساوات
جمعرات, 21 فروری, 2019
دہشت گردى ايك الميہ
پير, 11 فروری, 2019
124678910Last