شريعت كے عمومى مقاصد (2)‏

  • 16 ستمبر 2018
شريعت كے عمومى مقاصد (2)‏

 يہ بات  ہم پہلے بيان كر چكے ہيں كہ تمام شرعى احكام كا مركز اور محور، يا تو ان اہم بنيادى مقاصد كى حفاظت ہے( شريعت كے عمومى مقاصد 1 پڑهيں ) جو انسان كى تعمير وترقى اور تمدن  ميں سنگِ ميل كى حيثيت ركهتے ہيں اور  جن كے بغير دنيا وآخرت كى  زندگى متاثر ہوتى ہے، يا ان امور كى حفاظت ہے، جو لوگوں كى مشقت وتنگى اور پريشانى كو زائل كرنے كے لئے ضرورى ہيں، يا پهر تزئينى وتكميلى اور آرائشى چيزوں كى حفاظت ہے جن كا تعلق اخلاقِ حسنہ اور اچهى عادات سے ہے-

مقاصد كى ترتيب:

       ان مقاصد كى اہميت دراصلاسى  بيان كرده ترتيب كے مطابق ہے: سب سے پہلے اہم ترين بنيادى مقاصد، پهر ضرورى مقاصد، اور پهر تزئينى وتكميلى مقاصد، اگر ان ميں تعارض نہ ہو تو ان تينوں اقسام كى حفاظت لازمى ہے، اگر كسى ايك كى وجہ سے دوسرى قسم ميں خلل واقع ہو تو اہم بنيادى مقاصد كو ضرورى مقاصد  پر ترجيح دينا لازم ہے، كيونكہ بنيادى مقصد ميں خلل آئے تو ضرورى مقصد كا خيال ركهنا صحيح نہيں، چنانچہ كهانا پينا جان كى بقاء كے لئے بہت اہم ہے، اور نجس چيزوں سے اجتناب مقصد تزئينى ہے، اگر انسان نجس چيز كهانے پر مجبور ہو تو بنيادى مقصد جان كى حفاظت كى خاطر ضرورى مقصد كى  قربانى لازمى ہے اور نجس چيز كهانا جائز ہے، اسى طرح جان كى حفاظت كے لئے علاج  بنيادى مقصد ہے اور ستر پوشى تزئينى وتكميلى مقصد ہے، اور اگر بنيادى مقصد ميں خلل كا خطره ہو تو تزئينى مقاصد كا خيال ركهنا درست نہيں بلكہ علاج كى غرض سے  ستر كهولنا جائز ہوجاتا ہے "كيونكہ اہم بنيادى ضرورتيں حرام لوازما ت كو حلال كرديتى ہيں، اور عام ضروريات، تزئينى لوازمات ميں سے ممنوعات كو جائز كرديتى ہيں".

ضرورى مقاصد:

اپنى زندگى ميں تنگى ومشقت اور پريشانى كو دور كرنے كے لئے لوگوں كو شريعت كے ان "ضرورى مقاصد"  كى ضرورت ہوتى ہے، اور اہميت كے لحاظ سے ان كا دوسرا درجہ ہے، اس اعتبار سے كہ ان ميں سے بعض يا سب بهى مفقود  ہوں تو  زندگى كا نظام خراب نہيں ہوتا، ليكن ان كے مفقود يا مضطرب ہونے سے لوگوں كو تنگى ومشقت لاحق ہوتى ہے، ان كا تعلق معاملات ميں رخصت وآسانى سے ہے، جس سے مشقت وپريشانى ميں كمى ہوتى ہے، اور اس كے لئے ضرورى چيزوں كو مباح كرنا ہے.

  1. عبادات ،ميں مشقت كى صورت ميں رخصت كا حكم دياگيا  ہےجيسے تيمم كا جواز، رمضان ميں مسافر اور مريض كے لئے روزه ترك كرنے كى اجازت، اسى طرح سفر ميں چارركعت والى نماز، قصر كرنے كى رخصت ہے
  2. عادات ، ميں شكار كرنے اور سمندرى مردا ركو حلال كيا گيا، اور زندگى ميں خوردونوش اور لباس ميں پاكيزه  چيزوں سے استفاده كرنے كى اجازت دى گئى ہے-

(ج)  معاملات، ميں شرعى قواعد كى مخالفت كے باوجود بيع سلم، ادهار، مساقات اور مزارعت كى اجازت دى گئى، اسى طرح ازدواجى زندگى كى پريشانيوں، اور مشكلات سے چهٹكارا حاصل كرنے لئے ضرورتاً  طلاق كو مشروع كيا گيا ہے-

تكميلى مقاصد:

        يہ وه امور ہيں جو زندگى كو خوشگوار اور بہتر بناتے ہيں، ان كا تعلق اچهى عادات اور اعلى اخلاق سے ہے، اور ان كے مفقود ہونے سے لوگوں كى زندگى ميں خلل پيدا نہيں ہوتا، جيسا كہ اہم ترين مقاصد (كى مفقودگى سے ہوتا ہے)، نہ ان كى زندگى ميں تنگى ومشقت ہوتى ہے جيسا كہ ضرورى مقاصد (كے نہ ہونے سے ہوتى ہے) بلكہ (ان كى مفقودگى سے) داناؤں اور فطرت سليمہ كے مالك نفوس كى جانب سے ناپسنديدگى اور نفرت كا اظہار ہوتا ہے- جيسے:

  1. عبادات ميں،  (ضرورت سے زائد) پاكيزگى وسترپوشى، اور نماز كے لئے لباسِ زينت كا پہننا ہے-
  2. عادات ميں، فضول خرچى اور كنجوسى كى ممانعت اور خوردونوش كے آداب ہيں-

(ج) معاملات ميں ،نجس چيزوں كى خريد وفروخت، اضافى گهاس اور پانى فروخت كرنے كى ممانعت، مسلمان بهائى كى منگنى پر اپنى منگنى اور اس كى خريدى ہوئى چيز كو خريدنے  يا اس كى قيمت بڑهانے كى ممانعت، اور شوہروں كو  يہ حكم كہ وه اپنى  بيويوں كو اچهے طريقے سے (اپنى زوجيت ميں) روك ليں يا انہيں احسن انداز سے چهوڑديں-

   

Print

Please login or register to post comments.

 

لاک ڈاؤن کے دوران گھریلو تشدد !
بدھ, 13 جنوری, 2021
       قدرتی آفات اور خواتین پر تشدد کی اعلی شرحوں کے مابین قریبی وابستگی کسی ایک ملک سے منفرد نہیں ہے۔ لیکن یہ دنیا کے بہت سارے ممالک میں موجود ہے۔ اس موضوع پر تحقیقات کا مطالعہ کرنے كے بعد   ہمیں معلوم ہوتا ہے کہ...
"مذہبی آزادی۔۔ اسلام کا ایک بنیادی اصول”
اتوار, 10 جنوری, 2021
     کے عنوان سے الازہر_آبزرویٹری نے آج صبح ایک نئی ویڈیو جاری کی جس میں اس بات کی تصدیق کی گئی ہے کہ مذہبى_آزادى اسلام کے اہم ترین اصولوں میں سے ایک ہے اور جس کی تاکید واضح ‏طور پر قرآن كريم ميں: "لَا إِكْرَاهَ فِي...
کورونا وائرس کے مقابلہ کے لئے احتیاطی تدابیر کے حوالے سے الازہر الشریف کى سپریم علما کونسل کا بیان
منگل, 29 دسمبر, 2020
  -    مجاز ریاستی حکام کے ذریعہ طے شدہ احتیاطی تدابیر پر عمل کرنا شرعا  واجب ہے۔ سپریم علما کونسل۔ -    جماعت کی نماز میں اور جمعہ كے  خطبہ سننے میں نمازیوں کے ما بین کچھ فاصلہ رکھنے سے صحتِ نماز میں کوئی...
124678910Last

عالمی یوم امن کے موقع پر ازہر شریف کا دنیائے انسانیت کے لئے پیغام!
جمعرات, 22 ستمبر, 2016
پوری دنيا ہر سال مختلف قوموں كے مابین امن وسلامتي كے اخلاق واصول کو رائج كرنے کیلیے ۲۱ ستمبر کو عالمي یوم امن کے طور پر مناتی ہے۔ آج انسانیت ایسے دور سے گزر رہی ہے جہاں عام طور پر پوری انسانيت اور خاص طور پر بعض قومیں جنگ وفسادات، جہالت اور...
ازہر شريف پاكستان ميں مسجد پر ہونے والے حملہ كى شديد مذمت كرتا ہے-
بدھ, 14 ستمبر, 2016
ازہر شريف وفاق كے زير انتظام قبائلى علاقے مہمند ايجنسى ميں خودكش دهماكے جس كے نتيجہ ميں 30 افراد ہلاك جبكہ 31 زخمى ہوئے ہيں كى شديد مذمت كرتا ہے – ازہر شريف   دہشت گردى كى تمام صورتوں كى مذمت كرتا ہے اور اس بات پر تاكيد كرتا...
ازہر شریف کابل میں دو دہماکوں کی مذمت
منگل, 6 ستمبر, 2016
ازہر شریف پیر کے دن افغانستان کے دار الحکومت کابل میں وزارت دفاع کے قریب  دو دہشتگردوں دہماکوں، جس کے نتیجے میں 24 افراد ہلاک اور 90 افراد سے زیادہ زخمی ہوۓ ہیں کی شدید مذمت کرتا ہے۔ ازہر شریف تاکید کرتا ہے کہ ایسی دہشتگرد کاروائیاں روادار...
123578910Last

12345678910Last

دہشت گردى كے خاتمے ميں ذرائع ابلاغ كا كردار‏
                   دہشت گردى اس زيادتى  كا  نام  ہے جو  افراد يا ...
جمعه, 22 فروری, 2019
اسلام ميں مساوات
جمعرات, 21 فروری, 2019
دہشت گردى ايك الميہ
پير, 11 فروری, 2019
12345678910Last