تم بہترين امت ہو

  • 3 جولائی 2017
تم بہترين امت ہو

             رمضان المبارک كے آخرى عشره يعنى آخرى دس دن كو ايک خاص اہميت حاصل ہے كيونكہ اسى ميں مسلمان اپنے خالق بارى سے جہنم كى آگ سے نجات كى دعا كرتے ہیں، لوگ اس ميں خصوصى عبادات كرتے ہیں. مسجدوں ميں اعتكاف كرتے ہیں، صدقے ديتے ہیں، قرآن مجيد كو ختم كرنے كى كوشش كرتے ہیں اور شب بيدارى اور ذكر وفكر ميں مزيد منہمک ہو جاتے ہیں. اس ماه مباركہ كے آخرى عشره كى طاق راتوں ميں اہل ايمان پر رحمتوں اور بركتوں كا نزول اپنے عروج كو پہنچ چكا ہوتا ہے.

نبى پاک نے ارشاد فرمايا: "يہ ايسا مہينہ ہے جس كى ابتدا ميں رحمت، درميان ميں مغفرت اور آخر ميں دوزخ سے نجات ہے".

ويسے تو الله تعالى كے ہاں گناه كبيره كسى بهى مہينہ يا گهڑى ميں گناه كبيره ہى كہلايا جائے گا ليكن اس مہینہ ميں ہر سچے مسلمان كى ايک ہى تمنا ہوتى ہے كہ وه كسى بهى طريقہ سے اپنے دامن كو گناہوں سے پاك ركهے اور اپنے جهولى كو اس مبارك ماه كے عظيم اجر اور اس كے ثواب سے مالا مال كردے رمضان المبارك كى بركت وفضيلت ہے كہ اس ميں شيطان كو جكڑ ديا جاتا ہے حضور پاك نے فرمايا "جب ماه رمضان كى پہلى رات ہوتى ہے تو شيطانوں كو بيڑياں پہنا دى جاتى ہيں جہنم كے دروازے بند كرديے جاتے ہيں ". (ترمذى، السنن، ابواب الصوم، باب ما جاء في فضل شہر رمضان، ۲: ۶۱، رقم ۶۸۲) معنى كہ شيطان لوگوں كو بہكانے سے باز رہتے ہیں اور اہل ايمان ان كو وسوسے قبول نہیں كرتے.

ليكن اس با بركت مہینہ كے آخرى دنوں ميں جمعہ الوداع كو تقريبا ۳۰ افراد كے خاندانوں نے ان كو ہميشہ كے لئے الوداع كہہ ديا.

۲۴ جون/​ ۲۸ رمضان كو كوئٹہ ميں ايكـ دهماكہ كے نتيجہ ميں ۱۳ افراد ہلاک ہوئے جن ميں پوليس اہل كاروں كے علاوه معصوم بچے بهى شامل تهے. اس كے كچه ہى دير بعد "فاٹا" كے علاقہ "پاراچنار" ميں يکے بعد ديگرے دو دهماكوں كے نتيجہ ميں ۲۵ افراد جاں بحق اور ۱۰۰ سے زائد زخمى ہوئے.

عيد الفطر سے دو دن پہلے یہ معصوم جانيں بغير كسى جرم كے اپنے خالق حقيقى سے جا مليں.

ان حادثوں كا ذمہ دار ہر حال ميں مسلمان كيا انسان بهى نہیں كہلايا جا سكتا اور حديث شريف كے مطابق كہ رمضان ميں شيطانوں كو بيڑياں پہنا دى جاتى ہیں كہ يہ ذات تو شيطان سے بهى آگے نكل  گئے ہیں.

بغير حق كے كسى كى جان لينا  گناهِ كبيره ہے- ہمارا دين امن وسلامتى كى تلقين كرتا ہے، نہ كہ جنگ يا دہشت گردى كى-  الله تعالى نے ہر مسلمان پر دوسرے مسلمان كا خون، عزت وآبرو اور مال حرام قرار ديا ہے- نہ صرف مسلمانوں كا بلكہ اہلِ ذمّت اور پناه مانگنے والے كافروں كا بھى-

ارشادِ بارى ہے: ﴿ وَمَن يَقْتُلْ مُؤْمِنًا مُّتَعَمِّدًا فَجَزَآؤُهُ جَهَنَّمُ خَالِدًا فِيهَا وَغَضِبَ اللَّهُ عَلَيْهِ وَلَعَنَهُ وَأَعَدَّ لَهُ عَذَابًا عَظِيمًا ﴾ "النساء: 93" (اور جو كوئى كسى مومن كو قصدا قتل كر ڈالے، اس كى سزا دوزخ ہے جس ميں وه ہميشہ رہے گا، اس پر الله تعالى كا غضب ہے، اس پر الله تعالى نے لعنت كى ہے اور اس كے لئے بڑا عذاب تيار ركها ہے۔) اسى لئے جو بهى الله سے ڈرتا ہے اور اس كے غضب، لعنت اور عذاب سے دور رہنا چاہتا ہے اس كو اس جرم يعنى قتل كے كسى بهى سبب  سے دور رہنا چاہئے-

       عن عبد الله بن عمرو رضي الله عنهما عن النبي صلى الله عليه وسلم أنه قال: «لزوال الدنيا أهونُ على الله من قتل رجلٍ مسلمٍ» (رواه الترمذي). (عبد الله بن عمرو رضى الله عنہما سے مروى ہے كہ رسول الله صلى الله عليه وسلم نے فرمايا ہے كہ: الله كے نزديك ايك مسلمان كے قتل كے مقابلہ ميں تمام دنيا كى بربادى كچھ حيثيت نہيں ركهتى)-

          اس مختصر سى حديث ميں رسول الله صلى الله عليه وسلم نے ايك مسلمان كى قدر وقيمت اور اسكى عظمت وبزرگى كو نہايت واضح طور پر بيان فرمايا ہے-  اگر ايك طرف ايك سچا مسلمان ہو، اور دوسرى طرف دنيا بهر كى بربادى تو اس مقابلہ ميں رسول الله صلى الله عليه وسلم مسلمان كى زندگى بچانے كے لئے دنيا كا برباد ہونا برداشت كر ليں گے-  اس لئے كہ رسول الله صلى الله عليه وسلم كے نزديك مسلمان كى زندگى تمام دنيا سے كہيں زياده قيمتى ہے-

دنيا  كى ترقى صرف اسى صورت ممكن ہے جب باہمى كش مكش كے  بجائے امن كى فضا ہو-  اور دنيا كا امن وامان بهى اسى صورت  ميں قائم ره سكتا ہے جب انسان كے پيش نظريہ بلند مقصد ہو-  وه  الله پر ايمان ركهتا ہو، اور اسكى خوشى اور رضاجوئى كے لئے اپنا سب كچھ قربان كرنے كو تيار ہو- الله پر ايمان ہى ايك ايسى صفت ہے جو امن برقرار ركھ سكتى ہے- ايماندار شخص ادنى جذبات سے بہت بلند ہو كر اجتماعى فائدے كے ليے سوچتا ہے- خود غرضى، دشمنى اور حسد كے جذبات كى بجائے اس كے اندر ايك دوسرے كى مدد، محبت اور ہمدردى كى صفات پيدا ہوتى ہيں-

الله تعالى كا فرمان ہے: "كُنتُمْ خَيْرَ أُمَّةٍ أُخْرِجَتْ لِلنَّاسِ" (آل عمران: 110). (تم بہترين امت ہو جو لوگوں كے لئے پيدا كى گئى ہے)

رمضان كے مبارك مہينے ميں ايسا گناه كرناايك حقيقى مسلمان سے قطعى سرزد نہيں ہوسكتا، اگر ايسا كام كرنے والوں كا مقصد اسلام كى نصرت ہے تو بهلا معصوم لوگوں كا  خون بہا كر اسلام كى نصرت كيسے  ہوسكتى!!!

 الله تعالى فرماتا ہے "وادعوا الى سبيل ربك بالحكمة والموعظة الحسنى" (سورة النحل :125) "اپنے رب كى راه كى طرف لوگوں كو حكمت اور بہترين نصيحت كے ساتھ بلائيے اور ان سے بہترين طريقے سے گفتگو كيجئے"

الله تعالى اور اس كے دين كى طرف دعوت كا طريقہ  نا حق جانيں ضائع كر كے  نہيں بلكہ انسانى جان كى حفاظت كر كے ہوگا. ہم بهترين امت اس وقت تك نہيں ہوسكتے جب تك ہم  خير اور حق كى دعوت نہ ديں اور اس پر عمل نہ كريں، ہم بہترين امت اس وقت تك نہيں ہوسكتے جب تك ہم دوسروں كو اپنى ہاته اور زبان سے محفوظ نہ ركهيں، ہم بهترين امت اس وقت ہو گيں جب ہم اپنے قول وفعل سے اپنے نبى پاك كى پيروى كريں گيں ، اس نبى كى جس نے اذيت كے بدلے ميں اپنےدشمنوں سے نيك سلوك كيا، جس نے تمام مخلوقات كے ساته اچها سلوك كرنے كا حكم ديا، جو تمام دنيا كے لئے رحمت ہيں، پس ہم مسلمانوں سے يہى تقاضا ہے كہ ہم اس عظيم نمونہ كى پيروى كريں ، ارشاد بارى ہے " لقد كان لكم في رسول الله اسوة حسنه" ( تمهارے لئے رسول الله ميں بهترين نمونہ ہے) اور اسى عظيم نمونہ نے ہميں بار بار  امن وسلامتى پهيلانے كى دعوت دى ہے ، خوف وہراس كى نہيں.

جو بچوں اور خواتين كوبے رحمى سے قتل كرتے ہيں، مردوں كے سر قلم كرتے ہيں اور اُن كى ناموس كى آبروريزى كرتے ہيں  اور افسوس در افسوس يہ نفرت انگيز جرائم وه اس دين كے نام پر كرتے ہيں جس نے حالتِ جنگ ميں بهى بچوں، عورتوں اور بوڑهوں كو قتل سے منع كيا ہے۔ وه دين جو جانوروں، پودوں اور ہر جاندار چيز كے حقوق كا قائل ہے۔ وه دين جس كے نبى دنيا كے لئے رحمت بنا كر بهيجے گئے ہيں۔ جہاں بحث وتكرار اور تلخ كلامى بهى ممنوع ہے، مسلمان كيسے ہوسكتا ہے!!!!

مسلمان ہونا اتنا اہم نہيں ہے جتنا مسلمان بن كر اسلام كى عملى تطبيق ہے اور اسلام دنيا كو برباد كرنے كا نہيں بلكہ اس كو آباد كرنے كا حكم ديتا ہے .

 

 

Print

Please login or register to post comments.

 

نئى تاريخى دستاويز ات ... فلسطينى عوام كے خلاف قابض صہيونى جرائم كى گواه

صہيونى  اخبار"ہارٹس" نے   اپنے  گزشتہ ہفتہ وارضميمہ ميں   چند  تاريخى دستاويزات كے حوالے سے ايك رپورٹ  شائع كى،   يہ  دستاويزات- 1948ء سے  فلسطينى   زمين پر...

كهيل... تعارف اور ہم آہنگى

     مرصد الازہر برائے انسدادِ انتہا پسندى  نے  مصر ميں منعقد ہونے والے افريكان ورلڈ كپ كى مناسبت سے "كهيل ... تعارف اور ہم آہنگى" كے نام سے آج صبح ايك آگاہى  مہم  كا آغاز كيا،  جو 12 زبانوں...

انسانيت كے نام ايك دستاويز

     "انسانى بهائى چاره (اخوت) كى دستاويز" كہہ ديں يا "انسانيت كى  دستاويز"، شيخ الازہر اور وٹيكن كے پوپ نے چند مہينوں پہلے  فرورى ميں ايك عالمى اور تاريخى دستاويز پر دستخط كى، جس كا مقصد دنيا...

نیوزی لینڈ كى مسجد ميں نمازيوں پر خوفناك دہشتگردانہ حملے كے بارے ميں فضيلتِ مآب شيخ الازہرڈاكٹر احمد الطيب كا بيان

نمازِ جمہ كے دوران نيوزيلينڈ كے  كرائسٹ چرچ ميں ايك  مسجد پر  دہشت گرد حملہ   كى خبروں كو ميں نہايت  غم واداسى سے ديكھ رہا ہوں،جس كے نتيجہ ميں   پچاس افراد ہلا ك اور  اتنى ہى تعداد ميں  لوگ زخمى...

1345678910Last

انڈونشين علماء كونسل كے ساتھ ملاقات ميں فضيلت مآب امامِ اكبر شيخ ازہر كى علمائے امت كے درميان مصالحت اور مفاہمت كى دعوت ..
جمعرات, 12 مئی, 2016
انڈونشين علماء كونسل كے ساتھ ملاقات ميں فضيلت مآب امامِ اكبر شيخ ازہر كى علمائے امت كے درميان مصالحت اور مفاہمت كى دعوت . فضيلت مآب امامِ اكبر شيخ ازہر ڈاكٹر احمد الطيب نے اُمت مسلمہ كے علماء كے مابين مفاہمت اور روادارى كے فروغ اور تباه كن...
مغربی دنیا سے خطاب کرتے ہوئے امام اکبر کی بوندستاج (جرمنی کی قومی اسمبلی ) سے عالمی تقریر..
جمعرات, 12 مئی, 2016
مغربی دنیا سے خطاب کرتے ہوئے امام اکبر کی بوندستاج (جرمنی کی قومی اسمبلی ) سے عالمی تقریر: ہم جرمنی کی چانسلر انجیل میرکل کی نہایت قدر کرتے ہیں جنہوں نے مشرق میں ہونے والی جنگوں کی دوزخ سے پناہ مانگنے والوں کے لئے اپنے ملک کے دروازے کھولے ،...
ڈاكٹر احمد الطيب كا افريقى ملك ميں پہلا دوره
منگل, 10 مئی, 2016
 ڈاكٹر احمد الطيب كا افريقى ملك ميں  پہلا دوره  آگلے   دنوں كے دوران  فضيلت مآب امام اكبر شيخ ازہر اور مسلم علما كونسل کے سربراه پروفيسور ڈاكٹر احمد الطيب  سنيگال اور نيجريا   پر  دوره كريں...
First34568101112Last

پُرامن معاشره كى تشكيل ميں تعليم كا كردار
     تعليم ہر انسان  چاہے وہ  امير ہو يا غريب ، مرد ہو يا عورت  كى بنيادى ضرورتوں ميں سے...
پير, 9 ستمبر, 2019
فريضۂ حج
پير, 2 ستمبر, 2019
اولاد كے حقوق
پير, 2 ستمبر, 2019
عہد كى پابندى
جمعرات, 25 جولائی, 2019
12345678910Last

دہشت گردى كے خاتمے ميں ذرائع ابلاغ كا كردار‏
                   دہشت گردى اس زيادتى  كا  نام  ہے جو  افراد يا ...
جمعه, 22 فروری, 2019
اسلام ميں مساوات
جمعرات, 21 فروری, 2019
دہشت گردى ايك الميہ
پير, 11 فروری, 2019
12345678910Last