اسلام كردار كے زور سے پھيلا ہے ، تلوار كے زور سے نہيں

  • 25 دسمبر 2018
اسلام  كردار كے زور سے  پھيلا  ہے ، تلوار  كے زور سے نہيں

               اسلام امن وسلامتى  كا دين ہے  جو كردار كے زور  سے پھيلا  ہے،تلوار كے زور نہيں. دوسرے  لفظوں ميں كہا جا سكتا ہے كہ  يہ دين جب رسولِ اكرم پر نازل ہوا اور آپ نے اس كى تبليغ شروع كى تو آپ نے  كسى كو زبردستى  اس پر ايمان لانے كو نہيں كہا بلكہ  حضور اكرم ص نے كفار ومشركين كو ايمان  كى دعوت ديتے  ہوئے  اپنے كردار كو پيش  كيا  تھا، قرآن حكيم ميں  ہے: "فَقَدْ لَبِثْتُ فِيكُمْ عُمُرًا مِّن قَبْلِهِ أَفَلَا تَعْقِلُونَ" (میں اس سے پہلے تم میں ایک عمر رہا ہوں (اور کبھی ایک کلمہ بھی اس طرح کا نہیں کہا) بھلا تم سمجھتے نہیں ) (يونس: 16)۔

              لوگوں ميں عمر گزارنا  سيرت  وكردار  كاپتا   ديتا ہے، حضور نبى اكرم ؐ صادق اور امين  جانے جاتے تھے اور كفار  ومشركين  كو حضور نبى اكرم صلى الله عليه وسلم كے حسن اخلاق اور  كردار  كا  اس حد تك اعتراف  تھا  كہ بت پرستى  پر قائم رہنے   كے عوض  وہ   آپ كى  سارى  باتيں ماننے پر تيار  تھے،  جب وہ اس پر سمجھوتہ  نہ  كرنے  كے حوالے سے   مكمل  طور پر مايوس ہو گئے  تو انہوں نے مسلمانوں  پر  ظلم وستم  كى انتہا كردى ، حضور نبى اكرم صلى الله عليه وسلم  كى بار گاه  ميں   مسمان حاضر ہوتے  تو كوئى  زخمى   حالت ميں  ہوتا ،  كسى كو كوڑوں  سے  مار ا گيا  ہوتا ، تو كسى كو تپتى ريت  پر  گھسيٹا  گيا  ہوتا،  يہ درد ناك  صورت حال  ديكھ  كر حضور نبى ؐ صحابہ  كو صبر  كى تلقين  فرماتے۔

               بيعت عقبہ  اولى  كے موقعہ پر  حضور نبى اكرم  صلى اللہ عليه وسلم  نے حضرت مصعب  بن عمير  رضى اللہ عنہ  كو مدينہ روانہ فرمايا،  ان كى دعوت اس قدر پر  اثر ثابت  ہوئى  كہ اگلے سال حضرت مصعب  (75) مسلمانوں كو  بيعت عقبہ ثانيہ  كے لئے  مكہ  لے آئے ، سركار دو عالم  ؐنے آپ كے  ہمراه ( 12) انصار صحابہ كو نقبا ء  مقرر فرما  كر مدينہ  رخصت كيا، اور جب ہجرت مدينہ  ہوئى  تو مدينہ كے لوگوں  كى غالب  اكثريت اس  حال ميں مسلمان ہوچكى  تھى كہ  نہ تلوار اٹھائى گئ اور نہ  ہى  اذن قتال  نازل   ہوا تھا۔

               قرآنى تعليمات  اور حضور نبى اكرم ؐ  كى (63)سالہ انقلابى  جد وجہد  سے يہ حقيقت واضح ہو جاتى ہے  كہ آپ ؐ كى حيات طيبہ  ميں جتنے بھى معركے ہوئے ، ان ميں  كسى كو  زبردستى  مسلمان  بنانے  كى ايك  بھى مثال  نہيں ملتى،  اگرچہ ضرورت  كے وقت  دفعِ شر اور  فتنہ وفساد  كو  روكنے  كے لئے   جنگ  ميں  پہل  كى گئى ، ليكن زياده تر  معركوں   كى نوعيت  دفاعى رہى، تاريخ ہميں بتاتى ہے كہ جب بھى  مخالفين نے سر ِ تسليم  خم كيا  يا راه ِ فرار  اختيار كى ،  صلح كے  لئے  ہاتھ   بڑھايا   يا  ہتھيار   ڈال  دئيے ،   تو پھر مسلمانوں  نے  بھى  ان پر ہتھيار  نہ اٹھائے ، اسلام ميں جنگ  محض برائے جنگ نہيں  بلكہ قيام امن   كا ذريعہ ہے ، محمد بن القاسم سے  سندھ  دار السلام بن گيا ، يہ محض مسلمانوں كے كردار اور ان كے ثقافتى غلبہ  كا اثر  تھا  كہ  غير مسلم  حلقہ بگوش  اسلام ہوتے  گئے  اور دنيا ميں  ہر طرف  اسلام  كا ڈنكا   بجنے  لگا. ايك حقيقى مسلمان بننے كے لئے نہ صرف اسلام  بلكہ ايمان لانا ضرورى ہوتا ہے ، اور ايمان كا مركز دل ہے  اور دل ميں كوئى بهى جذبہ  زبردستى نہيں بستا . دلوں ميں ايمان اور عقلوں پر اسلام كى حكمرانى اسى وقت ہوگى جب الله  رب العزت كى طرف سے نازل شده اس عظيم دين كى صحيح  طرح تبليغ ہو، اور جو يقينا تلوار اور جنگ كے زور سے ہرگز نہيں ہوگا.  فرمانِ الہى ہے "ادْعُ إِلَىٰ سَبِيلِ رَبِّكَ بِالْحِكْمَةِ وَالْمَوْعِظَةِ الْحَسَنَةِ ۖ وَجَادِلْهُم بِالَّتِي هِيَ أَحْسَنُ ۚ" ((اے پیغمبر) لوگوں کو دانش اور نیک نصیحت سے اپنے پروردگار کے رستے کی طرف بلاؤ۔ اور بہت ہی اچھے طریق سے ان سے مناظرہ کرو۔) (سورۂ نحل: 125)

              ہم مسلمانوں كو  مسلمان ہونےپر فخر ہے .. " الحمدلله على نعمة الإسلام" ( اسلام كى نعمت پر الله كا شكريہ)، ايك مسلمان گهر ميں پيدا كركے الله رب العزت نے ہم پر ايك عظيم احسان كيا ہے ، دنيا ميں بہت سے لوگ  اس نعمت سے صرف اسى لئے محروم ہيں كہ وه ايك مسلمان ماں باپ كى اولاد نہيں ہيں، اور ان غير مسلمانوں  ميں بہت سے ايسے بهى ہيں جو اسلام كى تعليمات سے متاثر ہوتے ہيں، ان كو اس دين ميں نجات كى راه نظر آتى ہے ، اور وه ايسے مسلمانوں كى تلاش  ميں ہوتے ہيں جو ان كا ہاتھ پكڑ كر آہستہ آ ہستہ انہيں آگے لا سكے. .. جو انہيں يقين دلائے كہ اسلام لانے كا مطلب دين اور دنيا ميں سرفراز ہونا ہے.. جو ان كو بتائے كہ حقيقى مسلمان وه ہے جو اپنے ہاتھ اور زبان سے دوسروں كو محفوظ ركهے .. جو صرف " نام" كا نہيں بلكہ " كام" كا مسلمان ہو...  قرآن مجيد كى تعليمات اور رسولِ اكرم كے  نيك افعال اور اخلاقِ حسنہ كى پيروى  كركے  ہى  ہم اسلام كى   تبليغ كرنے ميں كامياب ہوں گے. اسلام كردار كے زور سے پهيلتا ہے .... تلوار كے زور سے نہيں ۔

Print

Please login or register to post comments.

 

كيا غير مسلمانوں سے دوستى ركهنا گناه ہے؟؟

    غير مسلمانوں كے ساتھ معاملات ميں كبهى كبهى ہمارے  ذہن ميں كئى سوال نمودار ہوسكتے ہيں ، جيسے كہ  دوستی اور عدم تعلقی کس کيلئے ہو !؟ اور کفار سے دوستی کا کيا حکم ہے!؟كچھ لوگوںكا كہنا ہے كہ  کافروں سے ايسی دوستی...

الازہر_الشریف ویینا میں ہونے والے دہشت گرد حملوں کی شدید مذمت کرتا ہے

  الازہر_الشریف اور شیخ_الازہر پروفیسر ڈاکٹر احمد_الطیب، آسٹریا کے دارالحکومت ویینا میں گذشتہ گھنٹوں کے دوران ہونے والے دہشت گردانہ حملوں کی سخت مذمت کرتے ہیں۔ الازہر الشریف نے تاکید کی کہ ایک جان کو ہلاک کرنا ساری انسانیت کو قتل کرنے...

شیخ الازہر USAID کے صدر سے ملاقات کے دوران: جنگوں اور نفرتوں کو روکنا دنیا کے مسائل حل کرنے کا آسان ترین طریقہ ہے

  یو ایس ایڈ کے صدر: ہم دنیا میں نفرت اور دہشت گردی کی جڑوں کے خاتمے کے لئے الازہر کے ساتھ تعاون کرنے کے خواہاں ہیں۔  گزشتہ دنوں شیخ الازہر پروفیسر ڈاکٹر احمد الطیب نے واشنگٹن میں امریکی ایجنسی برائے بین الاقوامی ترقی کے قائم مقام...

شیخ الازہر ڈاکٹر احمد الطیب”اسلامی دہشت گردی” جیسی اصطلاح کی شدید مذمت کرتے ہوئے اس کے استعمال کو جرم قرار دینے کا مطالبہ کرتے ہیں۔

     شیخ الازہر ڈاکٹر احمد الطیب نے مغربی ممالک کے بعض زمہ داران اور عہدیداروں کے “اسلامی دہشت گردی” کی اصطلاح کا استعمال کرنے کے اصرار پر شدید غم و غصہ کا اظہار کرتے ہوئے کہا: وہ اس بات سے بے خبر ہیں کہ اس قسم کی...

123456810Last

بيان الكنانہ كے جواب ميں المحروسه (ہميشہ محفوظ رہنے والى سرزمين "مصر") كا بيان..
بدھ, 12 اگست, 2015
بيان الكنانہ كے جواب ميں المحروسه (ہميشہ محفوظ رہنے والى سرزمين "مصر") كا بيان: بيان الكنانہ ميں درج امور نہ صرف دين اور شريعت پر جرات مندى ہے بلكہ اس ميں حقيقت كى خلاف ورزى ہے. مصر كے حكام نے انقلاب نہیں كيا بلكہ مصرى قوم كے چهوٹے...
امام اکبر کا یورپین یونین کے ممبران (سفراء) کے ساتھ ملاقات کے بعد بیان: "اسلاموفوبیا" ۔۔۔۔ کا مشرق اور مغرب کے ما بین تعلقات پر منفی اثرات۔
منگل, 16 جون, 2015
آج صبح فضیلت امام اکبر پروفیسر ڈاکٹر "احمد الطیب" نے یورپین یونین کے ملکوں کے سفراء سے ملاقات کی، اس یونین میں 27 سفیر شامل ہیں اور اس کے سربراہ جناب "جیمس مورن" ہیں۔ امام اکبر نے کہا کہ: آج دنیا ایک نئی اور نہایت منظم قسم کی...
امامِ اكبر شيخ ازہر ڈاکٹر احمد الطيب آج اپنے یورپی دورے کی شروعات لندن کے برطانوی دارالحکومت، لندن، سے کریں گے، اس دورے کی ابتدا وہ کینٹربری کے آرچ بشپ کے ساتھ مذاکرات سے شروع کریں گے
بدھ, 10 جون, 2015
•    امامِ اكبر شيخ ازہر ڈاکٹر احمد الطيب آج اپنے یورپی دورے کی شروعات لندن کے برطانوی دارالحکومت، لندن، سے کریں گے •    اس دورے کی ابتدا وہ کینٹربری کے آرچ بشپ کے ساتھ مذاکرات سے شروع کریں...
First456789101113

كيا غير مسلمانوں سے دوستى ركهنا گناه ہے؟؟
    غير مسلمانوں كے ساتھ معاملات ميں كبهى كبهى ہمارے  ذہن ميں كئى سوال نمودار ہوسكتے ہيں ، جيسے كہ  دوستی اور عدم تعلقی...
جمعرات, 12 نومبر, 2020
جہاد كے معانى
جمعرات, 5 نومبر, 2020
مذہبى آزادى
منگل, 13 اکتوبر, 2020
اسلام ميں اقليتوں كےحقوق
منگل, 28 جولائی, 2020
245678910Last

دہشت گردى كے خاتمے ميں ذرائع ابلاغ كا كردار‏
                   دہشت گردى اس زيادتى  كا  نام  ہے جو  افراد يا ...
جمعه, 22 فروری, 2019
اسلام ميں مساوات
جمعرات, 21 فروری, 2019
دہشت گردى ايك الميہ
پير, 11 فروری, 2019
124678910Last