بین الاقوامی ازہر کانفرنس برائے نصرت قدس کا اعلامیہ ‏

  • 18 جنوری 2018
بین الاقوامی ازہر کانفرنس برائے نصرت قدس کا اعلامیہ ‏

بسم اللہ الرحمن الرحیم

عالم عرب و اسلام میں ازہر شریف کے فکری و روحانی حوالے، اور مختلف مسیحی حلقوں بلکہ تمام دنیا کے اصحاب حریت اور اہل دانش کے ہاں اپنے احترام و اعتماد کے پیش نظر، دینی و انسانی ذمہ داری کو ادا کرتے ہوۓ، اور اس امانت کا پاس کرتے ہوۓ جسے ازہر اپنی شاندار تاریخ کی گیارہ صدیوں سے تھامے ہوۓ ہے؛ ازہر نے مسلم علماء کونسل کے تعاون، مصر کے صدر جناب عبدالفتاح السیسی کی زیر نگرانی اور فلسطینی صدر جناب محمود عباس کی موجودگی میں مصر کے دارالحکومت قاہرہ میں واقع ازہر کانفرنس ہال میں بیت المقدس کی نصرت و مدد کے لئے ایک عالمی کانفرنس منعقد کروائی؛ جس کا ہدف اصحاب فکر و دانش، اہل مذہب و سیاست اور دنیا کے مختلف بر اعظموں کے 86 ممالک سے آۓ امن و سلامتی کے خواہاں افراد کا باہمی تبادلۂ خیال تھا، تاکہ بیت المقدس کی شناخت، فلسطینی عوام کی عزت و وقار ، ان کی سرزمین کی حفاظت اور قدس شریف کی عربی و روحانی پہچان کو محفوظ بنانے کے لئے نۓ اسالیب اور جدید طریقہ ہاۓ کار دریافت کرتے ہوۓ اس صہیونی تکبر اور زعم برتری کو لگام ڈالی جاۓ جو بین الاقوامی فیصلوں کو للکارتا ہے، اقوام عالم اور خاص طور پر چار ارب مسلمانوں اور عیسائیوں کے جذبات کو بھڑکاتا ہے؛ اور تاکہ ان امریکی فیصلوں کو بھی مسترد کیا جاۓ ، جن کے باعث ظالم صہیونی استعمار کی طرف واضح طور پر اس کا جھکاؤ ثابت ہوتا ہے۔

29 ربیع الثانی اور یکم جمادی الاول 1439 ھ  بمطابق 17، 18 جنوری 2018 ء کو دو روز پر مشتمل سیشنز ، باہمی بات چیت اور ورکشاپوں کے بعد " بین الاقوامی ازہر کانفرنس براۓ نصرت قدس " کا درج ذیل شقوں پر مشتمل اعلامیہ اتفاق راۓ سے جاری کیا گیا:

اول:

 بیت المقدس سے متعلق 20 نومبر 2011 ء کو جاری شدہ ازہر کی دستاویز کی یہ کانفرنس از سر نو توثیق کرتی ہے، جس میں بیت المقدس کی عربی شناخت اور تاریخی اعتبار سے اس کا مسلمانوں اور عیسائیوں کے مقدس مقام ہونے پر زور دیا گیا تھا۔

دوم :

اس بات پر اصرار کہ بیت المقدس ہی فلسطینی ریاست کا دائمی دارالحکومت ہے، جس کے باقاعدہ رسمی اعلان، بین الاقوامی سطح پر اسے تسلیم کرنے اور بین الاقوامی تنظیموں اور اداروں میں اس کی متحرک رکنیت کو قبول کرنے کے لئے سنجیدہ کردار ادا کرنا واحب ہے۔ بیت المقدس صرف کوئی مقبوضہ زمین یا کوئی فلسطینی یا عرب مسئلہ نہیں ہے ، بلکہ معاملہ اس سے کہیں بڑھ کر ہے؛ یہ ایک اسلامی و مسیحی مقدس مقام ہے، اور مسلمانوں اور عیسائیوں کا ایمانی مسئلہ ہے؛ اور جب مسلمان اور عیسائی مل کر اسے ظالم صہیونی قبضے سے آزاد کروانے کے لۓ جدوجہد کرتے ہیں تو وہ اس کے تقدس کو ثابت کر رہے ہوتے ہیں، اور تمام انسانی معاشروں کو اسے صہیونی استعمار سے چھڑانے کے لئے ترغیب دے رہے ہوتے ہیں۔

سوم :

بیت المقدس کی عرب شناخت کسی قسم کی تبدیلی اور چھیڑ چھاڑ کی متحمل نہیں ہے، یہ ہزاروں سالوں سے ایک تاریخی حقیقت ہے، جسے مسخ کرنے یا عرب اور مسلمانوں کے ضمیر و اذہان اور تاریخ سے مٹانے کی عالمی صہیونی کوششیں ہرگز کامیاب نہیں ہوں گی؛ چنانچہ بیت المقدس کی عرب شناخت پچاس صدیوں پر محیط گہرے نقوش رکھتی ہے، کہ اسے قبل مسیح کے چوتھے ہزارے میں یبوسی عربوں نے یہودیت کے ظہور سے بہت قبل تعمیر کیا تھا، اور عبرانی وجود تو دسویں صدی قبل مسیح میں سیدنا داؤد اور سیدنا سلیمان علیھما السلام کے عہد میں 415 سال ہی اس شہر میں رہا ہے ؛ چنانچہ یہ عبرانی وجود تو بیت المقدس کی تاسیس کے تقریبا تیس صدیوں بعد پردۂ ظہور میں آکر معدوم بھی ہوجاتا ہے ۔

چہارم:

یہ کانفرنس حالیہ امریکی فیصلے کو سختی سے مسترد کرتی ہے، جس کی حیثیت مسلم و عرب دنیا اور تمام زندہ و آزاد قوموں کے نزدیک کاغذ پر بکھری سیاہی سے زیادہ نہیں ہے۔ اس طرح کے فیصلوں کا کوئی  تاریخی، قانونی اور اخلاقی جواز نہیں ہے بلکہ اس کے برعکس اقوام متحدہ کی قرادادیں تو صہیونی استعمار کو ناجائز قبضہ ختم کرنے کا پابند بناتی ہیں۔ اور یہ کانفرنس خبردار کرتی ہے کہ: اگر اس فیصلے کو واپس نہ لیا گیا تو پوری دنیا میں تشدد اور انتہا پسندی کو نئی غذا مل جاۓ گی۔

 

پنجم:

فلسطین سے صہیونی استعمار کا قبضہ ختم کرنے کے لئے عرب اور بین الاقوامی ( اسلامی، عیسائی، یہودی ) ہر طرح کے تمام رسمی امکانات کو بروۓ کار لایا جاۓ۔

ششم:

یہ کانفرنس تمام اسلامی حکومتوں، عرب لیگ، تنظیم تعاون اسلامی، اقوام متحدہ اور سول سوسائٹی کی تمام تنظیمات کو امریکی فیصلے کے نفاذ کو روکنے اور انسانی حقوق اور آزادیوں کے حق میں ظالمانہ پالیسیوں کے خلاف عالمی راۓ عامہ ہموار کرنے کی دعوت دیتی ہے۔

ہفتم:

فلسطینی عوام کی بہادرانہ ثابت قدمی اور مسجد اقصی و بیت المقدس اور مسئلہ فلسطین کے حق میں ان ظالمانہ فیصلوں کے خلاف ان کی تحریک انتفاضہ کی یہ کانفرنس مکمل حمایت کرتی ہے، اور اسی طرح بیت المقدس کے مسلم و مسیحی باہم تعاون اور ان ظالمانہ فیصلوں اور پالیسیوں کے خلاف ان کے ایک صف ہونے کو سلام پیش کرتی ہے۔ ہم انہیں اس کانفرنس کے ذریعے یقین دلاتے ہیں کہ ہم بیت المقدس کی آزادی تک ان کے ساتھ ہیں اور انہیں کبھی رسوا نہیں کریں گے۔

 

ہشتم:

یہ کانفرنس مسلم وعرب عوام اور دنیا کے تمام اصحاب حریت پر فخر کرتے ہوۓ انہیں امریکی کابینہ پر دباؤ جاری رکھنے کی دعوت دیتی ہے، تآنکہ وہ اپنے اس غیر قانونی فیصلے کو واپس لے لے۔ اور اسی طرح کانفرنس یورپین یونین اور ان تمام ممالک کے موقف کو سلام پیش کرتی ہے، جنہوں نے فلسطینی عوام کی حمایت کرتے ہوۓ بیت المقدس کے حق میں امریکہ کے ظالمانہ فیصلے کو مسترد کردیا۔

نہم:

الازہر یونیورسٹی اور اس کے تمام اداروں میں بیت المقدس سے متعلق پڑھایا جانے والا نصاب تشکیل دینے کے لۓ ازہر شریف  کے اس پہلے قدم کی کانفرنس مکمل حمایت کرتی ہے، تاکہ بچوں اور نوجوانوں میں مسئلہ فلسطین کی انگاری دہکتی رہے، اور ان کے ضمیروں میں یہ مسئلہ ہمیشہ جاگزیں رہے۔ اور اس کے ساتھ ساتھ مسلم و عرب ممالک سمیت  پوری دنیا کے تعلیمی اداروں اور تمام متحرک تنظیمات کو اسی طرح کا قدم اٹھانے کی دعوت دیتی ہے۔

 

دہم :

یہ کانفرنس دانشمند یہودیوں کو تاریخ سے عبرت  حاصل کرنے کی ترغیب دلاتی ہے، کہ سواۓ مسلم دور حکمرانی کے وہ جہاں بھی گۓ ظلم و زیادتی کا ہی شکار رہے؛ چنانچہ اس کے پیش نظر وہ ان تمام صہیونی سرگرمیوں کو بے نقاب کریں، جو سیدنا موسی علیہ السلام کی تعلیمات کے سراسر خلاف ہیں، کہ انہوں نے کبھی بھی قتل و غارت ، اہل علاقہ کو نقل مکانی پر مجبور کرنے، دوسروں کا حق چھیننے، ان کی زمین غصب کرنے اور ان کے مقدس مقامات کو لوٹنے کی دعوت نہیں دی۔

 

 

گیارہویں:

2018 ء کو بیت المقدس کا سال قرار دینے کے لۓ یہ کانفرنس ازہر کی تجویز کی توثیق کرتی ہے۔ اور مختلف پس منظر رکھنے والے تمام عوامی اداروں کو بھی یہ قدم اٹھانے کی دعوت دیتی ہے، تاکہ مسئلہ قدس کو مختلف پہلؤوں کے ساتھ اٹھایا جاسکے۔

بارہویں:

یہ کانفرنس تمام بین الاقوامی اداروں اور تنظیمات کو ترغیب دیتے ہوۓ انہیں بیت المقدس کی قانونی حیثیت اور اس کی شناخت کو محفوظ بنانے سمیت وہ تمام تدابیر اختیار کرنے کی دعوت دیتی ہے، جو فلسطینی عوام اور خاص طور پر بیت المقدس میں ثابت قدمی دکھانے والوں کی حمایت کرنے ، ان کے وسائل کو ترقی دینے اور ان تمام رکاوٹوں کو ختم کرنے کی ضمانت دیں، جو فلسطینی عوام کو ان کے بنیادی انسانی حقوق دینے اور انہیں اپنے مذہبی شعائر ادا کرنے سے روکتی ہیں۔ اور اس ضمن میں مسلم و عرب دنیا کے اہل حل و عقد کو فلسطینی عوام کی  بایں طور حمایت کی ترغیب دی جاۓ کہ ان کے بیت المقدس میں بقاء و استحکام کو یقینی بنایا جاسکے ، اور ایسا کوئی قدم نہ اٹھایا جاۓ کہ جس کی وجہ سے مسئلہ فلسطین کو نقصان پہنچے، یا ظالم صہیونی استعمار کے ساتھ معمول کے تعلقات بحال ہوجائیں۔

 

تیرہویں:

اس کانفرنس میں شریک معروف شخصیات اور اداروں کی ایسی کمیٹی تشکیل دی جاۓ جو تمام تجاویز کے نفاذ کی نگرانی کرے اور مسئلہ فلسطین اور خاص طور پر مسئلہ قدس کی حمایت کو جاری رکھتے ہوۓ اسے علاقائی اور بین الاقوامی ہر سطح پر اجاگر کرے۔

 

اللہ بیت المقدس کا حامی و ناصر ہو

والسلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

28 جمادی الاول 1439ھ  بمطابق 18 جنوری 2018 ء کو ازہر کانفرنس ہال میں تحریر شدہ

 

ڈاکٹر احمد الطیب

شیخ الازہر و صدر مسلم علماء کونسل

Print

Please login or register to post comments.

 

دہشت گرد اور انتہا پسند جماعتیں بچوں کو کیوں بھرتی کرتی ہیں؟
منگل, 16 مارچ, 2021
              بچوں کی بھرتی ایک سفاکانہ اور غیر انسانی عمل ہے ، جو دہشت گرد گروہوں میں وسیع پیمانے پر پھیلتا ہوا ایک واضح  رجحان بنتا نظر آرہا ہے، جس ميں حالیہ دنوں كے دوران قابل ذکر اضافہ دیکھنے میں...
لاک ڈاؤن کے دوران گھریلو تشدد !
بدھ, 13 جنوری, 2021
       قدرتی آفات اور خواتین پر تشدد کی اعلی شرحوں کے مابین قریبی وابستگی کسی ایک ملک سے منفرد نہیں ہے۔ لیکن یہ دنیا کے بہت سارے ممالک میں موجود ہے۔ اس موضوع پر تحقیقات کا مطالعہ کرنے كے بعد   ہمیں معلوم ہوتا ہے کہ...
"مذہبی آزادی۔۔ اسلام کا ایک بنیادی اصول”
اتوار, 10 جنوری, 2021
     کے عنوان سے الازہر_آبزرویٹری نے آج صبح ایک نئی ویڈیو جاری کی جس میں اس بات کی تصدیق کی گئی ہے کہ مذہبى_آزادى اسلام کے اہم ترین اصولوں میں سے ایک ہے اور جس کی تاکید واضح ‏طور پر قرآن كريم ميں: "لَا إِكْرَاهَ فِي...
123457910Last

ازہرشريف: چھيڑخوانى شرعًا حرام ہے، يہ ايك قابلِ مذمت عمل ہے، اور اس كا وجہ جواز پيش كرنا درست نہيں
اتوار, 9 ستمبر, 2018
گزشتہ کئی دنوں سے چھيڑ خوانى كے واقعات سے متعلق سوشل ميڈيا اور ديگر ذرائع ابلاغ ميں بہت سى باتيں كہى جارہى ہيں مثلًا يه كہ بسا اوقات چھيڑخوانى كرنے والا اُس شخص كو مار بيٹھتا ہے جواسے روكنے، منع كرنے يا اس عورت كى حفاظت كرنے كى كوشش كرتا ہے جو...
فضیلت مآب امام اکبر کا انڈونیشیا کا دورہ
بدھ, 2 مئی, 2018
ازہر شريف كا اعلى درجہ كا ايک وفد فضيلت مآب امامِ اكبر شيخ ازہر كى سربراہى  ميں انڈونيشيا كے دار الحكومت جاكرتا كى ‏طرف متوجہ ہوا. مصر کے وفد میں انڈونیشیا میں مصر کے سفیر جناب عمرو معوض صاحب اور  جامعہ ازہر شريف كے سربراه...
شیخ الازہر کا پرتگال اور موریتانیہ کی طرف دورہ
بدھ, 14 مارچ, 2018
فضیلت مآب امامِ اکبر شیخ الازہر پروفیسر ڈاکٹر احمد الطیب ۱۴ مارچ کو پرتگال اور موریتانیہ کی طرف روانہ ہوئے، جہاں وہ دیگر سرگرمیوں میں شرکت کریں گے، اس کے ساتھ ساتھ ملک کے صدر، وزیراعظم، وزیر خارجہ اور صدرِ پارلیمنٹ سے ملاقات کریں گے۔ ملک کے...
12345678910Last

بيٹى كى حسنِ تربيت، روزى اورخير وبهلائى كا ذريعہ
جاہليت كے زمانے ميں لوگ  لڑکیوں سے نفرت كيا کرتے تھے، ان کا خيال تها کہ وہ روزى اور خير کی کمی کا سبب ہیں۔ البتہ اسلام نے ان كے اس باطل...
منگل, 9 مارچ, 2021
اسلام میں مذہبی آزادی
منگل, 19 جنوری, 2021
12345678910Last

دہشت گردى كے خاتمے ميں ذرائع ابلاغ كا كردار‏
                   دہشت گردى اس زيادتى  كا  نام  ہے جو  افراد يا ...
جمعه, 22 فروری, 2019
اسلام ميں مساوات
جمعرات, 21 فروری, 2019
دہشت گردى ايك الميہ
پير, 11 فروری, 2019
12345678910Last