معلمّ انسانيت

  • 22 جولائی 2020
معلمّ انسانيت

حضور پاك كى شخصيت كسى كى تعريف  يا مدح وثنا كى منتظر نہيں ہے، ليكن اچها بننے كے لئے  اچهوں كى  پيروى كرنا بہت ضرورى ہوتى ہے. خاص طور پر اگر يہ شخصيت كسى خاص علاقہ يا قوم كى ہدايت يا مدد كے لئے محدود نہ ہو. نہ صرف مسلمانوں بلكہ غير مسلمانوں نے بهى رسولِ اكرم كى شخصيت، ان كے اخلاق اور ان كى زندگى كےبارےميں بہت لكها ہے. ايك مشہور انگريزى اديب "جورج برنارڈ شو" نے ان كے بارے ميں يہ الفاظ  لكهے"  حضرت محمد كو انسانیت کا نجات دہندہ کہا جانا چاہئے۔ مجھے یقین ہے کہ اگر اس جیسا آدمی جدید دنیا کی آمریت کو سنبھالتا تو ، وہ اس کے مسائل کو اس طرح حل کرنے میں کامیاب ہوجاتااورتمام دنيا ميں  مطلوبہ  امن اور خوشی عام ہوجاتى"۔الله ب العزت نے اپنے حبیب محسنِ انسانیتؐ کو آخری رسول اور کامل اسوۂ حسنہ بناکر مبعوث فرمایا،آپؐ  کی سیرت طیبہ کا مطالعہ زندگی کے ہر شعبے میں کیا جاسکتا ہے،حضور پرنور ؐ ایک متحرک درس گاہ کی حیثیت رکھتے ہیں، رسول مکرم ؐ کی حیات مبارکہ از ابتدا  تا   انتہا ایک کھلی کتاب ہے جس کا مطالعہ کرکے ہر ایک ہدایت حاصل کرسکتا ہے، آپؐ  کی تعلیمات کی تکمیل کا ثبوت آپؐ کی عملی زندگی سے ملتا ہے۔

       آٓپ ؐ کی حیات ِ طیبہ بہترین زندگی کا اعلیٰ نمونہ ہے، جس کا تجربہ انسانیت ابتدائے حیات سے اب تک کرتی آئی ہے، یہ زندگی اس انسان کامل کی زندگی ہے، جو دنیائے بشریت میں  بندگی کا حقیقی نمونہ ہیں، آپؐ کی زندگی اس قدر پرکشش اور جاذب ہے، جو دوستوں کو اپنی محبت کی بالاترین حد اور دشمن کو دشمنی کی حد تک پہنچا دیتی ہے، وہ نمونہ کامل ہے جسے "لقد کان لکم فی رسول اﷲ اسوۃ حسنۃ "قراردیا گیا ۔

نبؐى كريم نے اپنى سارى عمر اخلاقى اصولوں كى تبليغ اور الہى قوانين كى اشاعت ميں گزار دى  اور ایک دن کے لئے بھی وہ اپنے ماحول کی تیرگی سے مایوس نہ ہوئے،آپ ؐ كى محنت شاقہ نے ايك  مرده وافسرده قوم ميں زندگى كى روح پھونك دى،اس کو نہ صرف ایک مثالی معاشرہ میں تبدیل کیا، بلکہ اس معاشرہ کے افراد کو انسانیت کا علمبردار بناکر پیش کیا اور آپ ؐنے ان میں روحانی واخلاقی پاکیزگی، فرد کی آزادی، فرد اورمعاشرہ کے مابین ایک توازن قائم کیا جس کی مثال انسانی تاریخ میں دیکھنے کو نہیں ملتی ۔

 حضور اکرم ؐ کی حیات مبارکہ میں آپ کو کہیں بھی یہ نقص نظر نہیں آئے گا ، جو شخص سیرت و کردار پاک کی جتنی زیادہ گہرائی میں جائے گا وہ اسی قدر آپ ؐکے بلند اخلاق اور پاکیزہ کردار کا مدح سرا نظر آئے گا،آپ ؐ کی زندگی کا سب سے بڑا اصول یہ تھا کہ نیکی کا کوئی کام اور ثواب کا کوئی عمل ہو آپ ؐ سب سے پہلے اس پر عمل کرتے تھے، آپؐ جب کسی بات کا حکم دیتے تو پہلے آپ اس کو کرنے والے ہوتے، يعنى پہلے آپ اس كو خود كر كے دكهاتے.

آپؐ كى حيات طيبۂ اور سيرت مباركہ  كے بارے ميں حضرت انس ابن رضہ  مالك  كا بيان ہےكہ  "ميں نے  دس سال  رسول الله  ؐ كى خدمت كى، آنحضرتؐ نے كبھى  مجھے "اف " تك  نہيں  كہا اور ميرے كسى كام پريہ نہيں  فرمايا كہ  تم نے يہ كيوں كيا اور نہ  كبھى يہ فرمايا كہ تم نے يہ كام  كيوں  نہيں  كيا، بلاشبہ آنحضورؐ لوگوں ميں  سب سے زياد محاسن اخلاق كے حامل تھے۔ ايك مرتبہ  چند صحابى رضہ حضرت عائشہ صديقہ  رضہ كى خدمت ميں حاضر ہوئے اور  عرض كيا :"اے ام المؤمنين ! حضور ؐ كے  اخلاق اور معمولات  بيان فرمائے، تو عائشہ صديقہ نے جواب ديا كہ   كيا تم لوگوں نے قرآن نہيں پڑھا؟"كان خلق رسول الله القرآن": رسول اكرم ؐ كا اخلاق قرآن تھا"، خود قرآن كريم   ميں آپؐ  كے بلند اخلاق وكردار كى شہادت دى گئى ہے كہ"بيشك آپ ؐ كے اخلاق اعلى  پيمانہ پر  ہيں"۔

آپ ؐ  كريم النفس ، طبيعت كے نرم اور اخلاق كے نيك تھے، طبيعت ميں  مہربانى تھى سخت مزاج نہيں تھے، كسى كى دل شكنى نہ  كرتے تھے، بلكہ دلوں  پر مرہم  ركھتے تھے، آپ ؐ  رؤف  ورحيم تھے،اللہ تعالیٰ نے رسول اللہؐ  کو ایک مثالی نمونہ بناکر دنیا میں بھیجا ہے اور لوگوں کو یہ ہدایت دی ہے کہ زندگی کے ہر شعبہ، ہر دور، ہر حال میں اس نمونہ کے مطابق خود بھی بنیں اور دوسروں کو بنانے کی فکر کریں، گویا  رسول ؐ کا اخلاق و سیرت ایک حیثیت سے عملی قرآن ہے۔

یہ ایک ناقابل تردید حقیقت ہے کہ آپ ؐ  کی زندگی دنیائے بشریت کے لئے اسو هِء حسنہ اور الٰہی فیوض و ہدایات و احکام کا ایسا مفید وگہرا چشمہ ہے جو کبھی خشک ہونے والا نہیں ہے، آپ ؐ کی حیات طیبہ میں پاکیزہ زندگی کے تمام پہلوؤں کی مثالیں اور نمونے موجود ہیں امن وآشتی کی جھلکیاں ہوں تو صلح ومصالحت کی بھی، دفاعی حکمت عملی کی بھی اور معتدل حالات میں پرسکون کیفیات کی بھی، اپنوں کے واسطہ کی بھی اور بے گانوں سے تعلقات کی بھی معاشرت و معاملات کی بھی اور ریاضت و عبادات کی بھی، عفوو کرم کی بھی اور جودوسخا کی بھی تبلیغ و تقریر کی بھی اور زجر و تہدید کی بھی ان جھلکیوں میں جاں نثاروں کے حلقے بھی ہیں اور سازشوں کے نرغے بھی ، امیدیں بھی ہیں اور اندیشے بھی گویا  انسانی زندگی کے گوشوں پر محیط ایک ایسی کامل اور جامع حیات طیبہ ہے جو رہتی دنیا  تک پوری انسانیت کے لئے رہبر و رہنما ہے۔

آپ ؐ کے اسوہِ ءحسنہ کا احاطہ کرنا ممکن نہیں کہ آپؐ نے اپنی امت کی رہنمائی کےلئے زندگی کے ہر شعبہ میں عمل کا وہ بھرپور نمونہ پیش کیا جو تاریکی کے ہر دور میں قلب و جان کو منور کرتا رہا ہے اور ہمیشہ کرتا رہے گا ، آپؐ کے اسوہِ ءحسنہ کا ہر گوشہ انسانیت کےلئے روشنی کا وہ  دائمی سرچشمہ ہے جس سے ہر عہد کا انسان رہنمائی حاصل کرتا رہے گا ،آپؐ نے آدمیت کو جو عزو شرف بخشا  اس کےلئے ابن آدم ابد الاباد تک اس محسن عظیم کا احسان مند رہے گا ۔

Print

Please login or register to post comments.

 

روہنگيا مسلمان.... ايك حل طلب بحران

     12 مختلف زبانوں ميں روہنگيا مسلمانوں كے مسئلہ پر ايك بار پهر روشنى ڈالنے كے لئے الازہر آبزرويٹرى برائے انسداد انتہا پسندى  كى جانب سے اس شائع كرده ويڈيو كا ہدف دنيا كے ہر لہجہ ميں برادرى كى انسانى اور سياسى زمہ دارى كو...

قرآن پاک کو جلانا نفرت کے جذبات کو ہوا دیتا ہے اور بین المذاہب مکالمہ کے نتائج کو نقصان پہنچاتا ہے

قرآن پاك کو جلانے كى جرات ركهنے والے مجرموں كو يہ اچهى طرح جان لينا چاہيےکہ یہ جرائم ہر معیار سے وحشیانہ دہشت گردی ہیں ، یہ ایک ايسى نفرت انگیز نسل پرستی اور دہشت گردى  ہے جس كو تمام انسانی تہذیبیں رد كرتى ہیں ، بلکہ يہى اعمال ہى  دنيا...

وَلَا تُفْسِدُوا فِي الْأَرْضِ!! (اور ملك میں خرابی نہ کرنا)

          زندگى ايك نعمت ہے، اس كى حفاظت كے لئے او ر اس كرۂ ارض پر   ايك معزز اور مكرم طريقہ سے رہنے كے لئے الله رب العزت نے كچھ اصول وضوابط مقرر كئے۔ يہ اصول وضوابط الله سبحانہ وتعالى نے اپنے...

اسلام ميں اقليتوں كےحقوق

  اسلام نے انسان كو ايك عظيم مرتبہ عطا كيا ہے،  قرآن پاك ميں يہ صاف طور پر واضح كرديا گيا ہے كہ الله رب العزت نے اس   كائنات كو اس كى خدمت كےلئے مسخر كيا ہے. انسانی حقوق کے بارے میں اسلام کا تصور بنیادی طور پر بنی نوع انسان...

1345678910Last

ازہرشريف: چھيڑخوانى شرعًا حرام ہے، يہ ايك قابلِ مذمت عمل ہے، اور اس كا وجہ جواز پيش كرنا درست نہيں
اتوار, 9 ستمبر, 2018
گزشتہ کئی دنوں سے چھيڑ خوانى كے واقعات سے متعلق سوشل ميڈيا اور ديگر ذرائع ابلاغ ميں بہت سى باتيں كہى جارہى ہيں مثلًا يه كہ بسا اوقات چھيڑخوانى كرنے والا اُس شخص كو مار بيٹھتا ہے جواسے روكنے، منع كرنے يا اس عورت كى حفاظت كرنے كى كوشش كرتا ہے جو...
فضیلت مآب امام اکبر کا انڈونیشیا کا دورہ
بدھ, 2 مئی, 2018
ازہر شريف كا اعلى درجہ كا ايک وفد فضيلت مآب امامِ اكبر شيخ ازہر كى سربراہى  ميں انڈونيشيا كے دار الحكومت جاكرتا كى ‏طرف متوجہ ہوا. مصر کے وفد میں انڈونیشیا میں مصر کے سفیر جناب عمرو معوض صاحب اور  جامعہ ازہر شريف كے سربراه...
شیخ الازہر کا پرتگال اور موریتانیہ کی طرف دورہ
بدھ, 14 مارچ, 2018
فضیلت مآب امامِ اکبر شیخ الازہر پروفیسر ڈاکٹر احمد الطیب ۱۴ مارچ کو پرتگال اور موریتانیہ کی طرف روانہ ہوئے، جہاں وہ دیگر سرگرمیوں میں شرکت کریں گے، اس کے ساتھ ساتھ ملک کے صدر، وزیراعظم، وزیر خارجہ اور صدرِ پارلیمنٹ سے ملاقات کریں گے۔ ملک کے...
123578910Last

وَلَا تُفْسِدُوا فِي الْأَرْضِ!! (اور ملك میں خرابی نہ کرنا)
          زندگى ايك نعمت ہے، اس كى حفاظت كے لئے او ر اس كرۂ ارض پر   ايك معزز اور مكرم طريقہ...
جمعه, 14 اگست, 2020
اسلام ميں اقليتوں كےحقوق
منگل, 28 جولائی, 2020
معلمّ انسانيت
بدھ, 22 جولائی, 2020
اسلام دین رحمت ہے
منگل, 7 جولائی, 2020
اور اپنے آپ کو قتل نہ کرو!
اتوار, 10 مئی, 2020
1345678910Last

دہشت گردى كے خاتمے ميں ذرائع ابلاغ كا كردار‏
                   دہشت گردى اس زيادتى  كا  نام  ہے جو  افراد يا ...
جمعه, 22 فروری, 2019
اسلام ميں مساوات
جمعرات, 21 فروری, 2019
دہشت گردى ايك الميہ
پير, 11 فروری, 2019
1345678910Last