اے بيٹيوں كے باپ آج تمہارے لئے خوشخبرى ہو

  • 28 اگست 2017
اے بيٹيوں كے  باپ آج تمہارے لئے خوشخبرى ہو

اللہ رب العالمين نے قرآن كريم ميں ارشاد فرمايا ہے كہ : (وَالَّذِينَ يَقُولُونَ رَبَّنَا هَبْ لَنَا مِنْ أَزْوَاجِنَا وَذُرِّيَّاتِنَا قُرَّةَ أَعْيُنٍ وَاجْعَلْنَا لِلْمُتَّقِينَ إِمَامًا) [الفرقان: ۷۴]

(اے ہمارے پروردگار توہمیں ہماری بیویوں اوراولاد سے آنکھوں کی ٹھندک عطا فر ما اور ہمیں پرہیز گاروں کا پیشوا بنا ۔)

(هُنَالِكَ دَعَا زَكَرِيَّا رَبَّهُ ۖ قَالَ رَبِّ هَبْ لِي مِن لَّدُنكَ ذُرِّيَّةً طَيِّبَةً ۖ إِنَّكَ سَمِيعُ الدُّعَاءِ) [آل عمران :۳۸[

(اے پرور دگار : تو اپنی طرف سے مجھے نیک اولاد عطا فرما ‘ بے شک تو ہی دعائوں کو سننے والا ہے۔)

اسی طرح حضرت ابراہیمؑ نے اللہ تعالی سے یہ دعا مانگی تھی

(رَبِّ هَبْ لِي مِنَ الصَّالِحِينَ) [الصافات :۰۰ ۱ [(ا ے اللہ: توہمیں نیک اولاد عطا فرما۔ )

اللہ رب العزت سے جب بھی دعا مانگی جا ئے توہمیشہ نیک اولاد ہی کی دعا مانگیں ۔کیونکہ نیک اولاد ہی حقیقتا آنکھوں کی ٹھندک ‘ بڑھاپے کا سہارا ‘ انسان کی قوت بازو اور باعث سعادت فی الدنیا والآ خرۃ ہے لڑکا ہو یا لڑکی دونوں کی پیدائش پر یکساں خوشی کا اظہار کرنا اور  ظاہری حقوق ميں لڑکوں اور لڑکیوں کے ساتھ برابر سلوک كرنا اور تمام بچوں کے حقوق کا خیا ل رکھنا ہم پر واجب ہے ۔ رسول اللہﷺ کا ارشاد گرامی ہے (فاتقوا اللہ واعدلوا بین اولادکم ) [متفق علیہ[

" اللہ سے ڈرتے رہو اور اپنی اولاد کے درمیان عدل و انصاف سے کام لو" ليكن انتہائى افسوس كا مقام يہ ہے كہ آج  پاكستان اور بعض اسلامى ممالك ميں ان واقعات كو ديكها جارہا ہے جو دور جاہليت ميں ہوتے تهے قرآن مجید نے اس جاہليت کو یوں بیان کیا ہے۔

(وَإِذَا بُشِّرَ أَحَدُهُم بِالْأُنثَىٰ ظَلَّ وَجْهُهُ مُسْوَدًّا وَهُوَ كَظِيمٌ) [ النحل۵۸[

"اور جب ان میں سے کسی کے ہاں لڑکی پیدا ہونے کی خوش خبری دی جاتی ہے تو غم کی وجہ سے اس کا منہ کالا ہو جاتا ہے اور غصہ سے بھر جاتا ہے"

اسلام كے آنے سے قبل دور جاہليت ميں جس كے ہاں بيٹى پيدا ہوتى اس كے گهر ميں ماتم شروع ہو جاتا اور لوگ اپنى بيٹوں كو درگورکر ديتے تاكہ معاشرے ميں ان كى عزت ميں كوئى کمی نہ آئے – اسلام  آنے كے بعد اللہ كے نبى  ﷺ نے دور جاہليت  كے اس عمل كو نہ صرف اسلامى تعليمات كے منافى قرار ديا بلكہ بيٹى كو رحمت قرار ديتے ہوئے دور جاہليت  كى ان تمام رسموں كو ختم  كرديا  جس سے بيٹى كى تحقير ہوتى تهى- بيٹيوں كي عظمت و شوكت بلند كرنے والے يہ كلمات بھى ملاحظه كريں، رسول صلى اللہ  عليه وسلم  نے ارشاد فرمايا:
(من كانت له انثيٰ ولم يودھا ولم يھنھا و لم يوثر ولده عليها ادخله اللّٰه الجنة)

"جس كي ايك بچى ہو، وه اسے زنده در گور نہ كرے، اس كي توہين  نہ كرے، اپنے بيٹے كو اس پر فوقيت بھى نہ دے تو اس امر كے بدلے الله تعاليٰ اس كو جنت ميں داخل كرے گا۔"

آج سوچنے كى بات يہ ہے كہ كيا جو لوگ بيٹيوں كے پيدا ہونے پر  ماتم كرتے ہيں يا ان کو منحوس قرار ديتے ہيں يا ان كو بدبختى  كى علامت سمجھتے ہيں تو كيا وه  اسلامى تعليمات  كى خلاف ورزى نہيں كررہے؟  كيا كوئى شخص معصوم بچيوں كے ساتھ زيادتى  كر  كے مسلمان   يا انسان بهى ره سكتا  ہے؟  ہرگز نہيں-

 اسلام بيٹیوں كى عزت  وعظمت اور ان كے احترام كا درس ديتا ہے- رسول اكرم صلى اللہ عليہ وسلم كى نبوت كى پہلى  گواہى بهى ايک عورت ام  المومنين سيده خديجہ رضى اللہ عنها  نے دى  ہے  اور دين اسلام كا ايك بہت بڑا حصہ ہميں سيده فاطمہ الزہرا  رضى اللہ عنها ، سيده عائشہ صديقہ رضى اللہ عنها ، سيده حفصہ رضى اللہ عنها اور ديگر امہات المومنين رضى اللہ عنها  اور صحابيات رضى اللہ عنها سے ملا ہے، جس سے يہ بات بهى واضح ہوتى ہے كہ شريعت اسلاميہ كے دائره ميں جہاں بيٹا تعليم حاصل كر سكتا ہے وہاں بيٹى بھی  ہر ميدان  ميں تعليم حاصل كر سكتى  ہے اور اللہ كے نبى صلى اللہ عليہ وسلم كا فرمان واضح ہے " علم حاصل كرنا ہر مسلمان مرد اور عورت پر فرض ہے "

عورت کا نان ونفقہ ہر حالت میں مرد کے ذمہ ہے۔ اگر بیٹی ہے تو باپ کے ذمہ۔ بہن ہے تو بھائی کے ذمہ ، بیوی ہے تو شوہر پر اس کانان و نفقہ واجب کردیا گیا اور اگر ماں ہے تو اس کے اخراجات اس کے بیٹے کے ذمہ ہے، ارشاد باری تعالی ہے کہ (عَلَى الْمُوسِعِ قَدَرُهُ وَعَلَى الْمُقْتِرِ قَدَرُهُ مَتَاعًا بِالْمَعْرُوفِ ) (البقرہ: ۲۳۶)  ( خوشحال آدمی اپنی استطاعت کے مطابق اور غریب آدمی اپنی توفیق کے مطابق معروف طریقے سے نفقہ دے۔) عورت کا حقِ مہر ادا کرنا مرد پر لازم قرار دیا گیا ہے۔ اللہ تعالیٰ قرآن کریم میں فرماتا ہے کہ (وَآتُوا النِّسَاءَ صَدُقَاتِهِنَّ نِحْلَةً ۚ فَإِن طِبْنَ لَكُمْ عَن شَيْءٍ مِّنْهُ نَفْسًا فَكُلُوهُ هَنِيئًا مَّرِيئًا) (النساء: 4) عورتوں کا ان کا حقِ مہر خوشی سے ادا کرو اگر وہ اپنی خوشی سے اس میں سے کچھ حصہ تمھیں معاف کردیں تو اس کو خوشی اور مزے سے کھاوٴ۔

حضور پاک نے فرمایا کہ " النساء شقائق الرجال" یعنی کہ مرد اور عورت برابر ہیں، دونوں انسان ہيں جو اللہ کے دربار میں قیامت کے دن اپنے اعمال کے جواب دہ ہوں گے، دونوں کے حقوق بھی ہيں اور واجبات بھی اور اس زندگی کی کشتی دونوں کی محنت اور تعاون کے بغیر زندگی کے سمندر اور اس کی اونچی لہروں کا سامنا ہرگز نہیں کرسکتی۔اللہ رب العزت کی بنائی ہوئی یہ منفرد مخلوق "زحمت" کیسے ہو سکتی ہے!!!۔۔۔۔۔ لڑکی، ماں، بیٹی، بیوی، بہن ہر صورت میں "رحمت" ہے "زحمت" ہرگز نہیں۔۔۔۔

Print

Please login or register to post comments.

 

نئى تاريخى دستاويز ات ... فلسطينى عوام كے خلاف قابض صہيونى جرائم كى گواه

صہيونى  اخبار"ہارٹس" نے   اپنے  گزشتہ ہفتہ وارضميمہ ميں   چند  تاريخى دستاويزات كے حوالے سے ايك رپورٹ  شائع كى،   يہ  دستاويزات- 1948ء سے  فلسطينى   زمين پر...

كهيل... تعارف اور ہم آہنگى

     مرصد الازہر برائے انسدادِ انتہا پسندى  نے  مصر ميں منعقد ہونے والے افريكان ورلڈ كپ كى مناسبت سے "كهيل ... تعارف اور ہم آہنگى" كے نام سے آج صبح ايك آگاہى  مہم  كا آغاز كيا،  جو 12 زبانوں...

انسانيت كے نام ايك دستاويز

     "انسانى بهائى چاره (اخوت) كى دستاويز" كہہ ديں يا "انسانيت كى  دستاويز"، شيخ الازہر اور وٹيكن كے پوپ نے چند مہينوں پہلے  فرورى ميں ايك عالمى اور تاريخى دستاويز پر دستخط كى، جس كا مقصد دنيا...

نیوزی لینڈ كى مسجد ميں نمازيوں پر خوفناك دہشتگردانہ حملے كے بارے ميں فضيلتِ مآب شيخ الازہرڈاكٹر احمد الطيب كا بيان

نمازِ جمہ كے دوران نيوزيلينڈ كے  كرائسٹ چرچ ميں ايك  مسجد پر  دہشت گرد حملہ   كى خبروں كو ميں نہايت  غم واداسى سے ديكھ رہا ہوں،جس كے نتيجہ ميں   پچاس افراد ہلا ك اور  اتنى ہى تعداد ميں  لوگ زخمى...

123456810Last

ازہرشريف: چھيڑخوانى شرعًا حرام ہے، يہ ايك قابلِ مذمت عمل ہے، اور اس كا وجہ جواز پيش كرنا درست نہيں
اتوار, 9 ستمبر, 2018
گزشتہ کئی دنوں سے چھيڑ خوانى كے واقعات سے متعلق سوشل ميڈيا اور ديگر ذرائع ابلاغ ميں بہت سى باتيں كہى جارہى ہيں مثلًا يه كہ بسا اوقات چھيڑخوانى كرنے والا اُس شخص كو مار بيٹھتا ہے جواسے روكنے، منع كرنے يا اس عورت كى حفاظت كرنے كى كوشش كرتا ہے جو...
فضیلت مآب امام اکبر کا انڈونیشیا کا دورہ
بدھ, 2 مئی, 2018
ازہر شريف كا اعلى درجہ كا ايک وفد فضيلت مآب امامِ اكبر شيخ ازہر كى سربراہى  ميں انڈونيشيا كے دار الحكومت جاكرتا كى ‏طرف متوجہ ہوا. مصر کے وفد میں انڈونیشیا میں مصر کے سفیر جناب عمرو معوض صاحب اور  جامعہ ازہر شريف كے سربراه...
شیخ الازہر کا پرتگال اور موریتانیہ کی طرف دورہ
بدھ, 14 مارچ, 2018
فضیلت مآب امامِ اکبر شیخ الازہر پروفیسر ڈاکٹر احمد الطیب ۱۴ مارچ کو پرتگال اور موریتانیہ کی طرف روانہ ہوئے، جہاں وہ دیگر سرگرمیوں میں شرکت کریں گے، اس کے ساتھ ساتھ ملک کے صدر، وزیراعظم، وزیر خارجہ اور صدرِ پارلیمنٹ سے ملاقات کریں گے۔ ملک کے...
12345678910Last

شيشوں كے ساتھ نرمى سے پيش آو!
  اسلام دين اور دنيا .. دونوں كا دين ہے ، اور دنيا كے  تمام امور كا انتظام صرف مرد يا صرف عورت نہيں كر سكتى، ايك اچهى زندگى گزارنے كے...
منگل, 26 نومبر, 2019
مذہب كى آزادى كا حق
بدھ, 20 نومبر, 2019
علما كے حقوق اورفرائض
بدھ, 9 اکتوبر, 2019
12345678910Last

اسلام امن وسلامتى كا مذہب ہے
                 الله تعالى نے  دنيا ميں اپنے پيغام كو لوگوں تك پہنچانے كے لئے انبيا اور رسولوں...
اتوار, 18 نومبر, 2018
تعاون كى قيمت
منگل, 13 نومبر, 2018
انسان كون ہے‎!‎؟
بدھ, 17 اکتوبر, 2018
قتلِ مسلم ‏
اتوار, 14 اکتوبر, 2018
123578910Last